اب تو خواہش ہے کے یہ زخم بھی کھا کر دیکھیں!
لمـــحہ بھــر کــو ہی سہـی اُس کو بھلا کر دیکھیں!
شہـــر میں جشـــن شب قـــدر کــی ســاعت آئــی!
آج ہم بھـــی تــیرے مــلنے کی دعـــا کـــر دیکـــھیں!
آندھــیوں سے جو الجھنے کی کســک رکھتے ہیں!
اک دیا تیــز ھــــوا مــیں بھــــی جـــلا کـــر دیکھـــــیں!
کـــچھ تـــو آوارہ ھـــواؤں کــی تھــــکن ختـــم کـــریں!
اپنے قــــدمـــوں کے نشـــاں آپ مــــٹا کــــر دیکھـیں!
زندگـــــی اب تجھے ســــوچیں بھی تو دم گھٹتا ہے!
ہم نے چــــاھا تھا ، کبھی تجھ سے وفا کـر دیکھـیں!
جــن کے ذروں میں خزاں ہانپ کے ســو جاتی ھے!
ایســـی قــــبروں پہ کــوئی پھـــول سجا کــر دیکھیں!
دیکــھـــنا ھـــو تـــو محـــــبت کے عـــــزاء داروں کــو!
ناشـــــناسائی کــــی دیوار گــــرا کــــر دیکھـــیں!
یوں بھــــی دنیا ھمــیں مقـروض کیے رکھـــتی ہے!
دست قـــاتل تـــیرا احســـاں بھـــی اٹھا کر دیکھیں!
رونے والــــوں کے تو ھـــمـــدرد بہــت ہیں محسن!
ہنستے ہنستے کبھــــی دنیا کو رلا کــر دیکھــیں!

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *