آنکھوں کے چراغوں میں اُجالے نہ رہیں گے !
آجاؤ ،،،،، کہ پھر دیکھنے والے نہ رہیں گے !
جا شوق سے لیکن پلٹ آنے کے لیے جا !
ہم دیر تک اپنے کو سنبھالے نہ رہیں گے !
اے ذوقِ سفر ہو ،،،،،،،، نزدیک ہے منزل !
سب کہتے ہیں اب پاؤں میں چھالے نہ رہیں گے !
جن نالوں کی ہوجائے گی تا دوست رسائی !
وہ سانحے بن جائیں گے، نالے نہ رہیں گے !
شمعیں جو بجھیں بُجھنے دے، دل بُجھنے نہ پائے !
یہ شمع ہوئی گُل ،،،،،،،،،،،، تو اُجالے نہ رہیں گے !
کیوں ظُلمتِ غم سے ہو خمار اتنے پریشان ؟
بادل یہ ھمیشہ ہی تو کالے نہ رہیں گے !

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *