Home / Islam / ہدایت کے ضابطے

ہدایت کے ضابطے

ہدایت کے ضابطے !
الحمد للہ وحدہ ،
والصلوۃ والسلام علی من لا نبی بعدہ ،،
اما بعد ،،،،
انسانوں کی دو قسموں سے اکثر واسطہ پڑتا ھے ،،،،
ایک وہ لوگ جنہیں حقیقت میں حق کی تلاش ھوتی ھے اور وہ پوچھتے پھرتے ھیں کہ ان سے کہاں غلطی ھوئی ھے ؟ وہ رب تک پہنچنا چاھتے ھیں ،،، ان لوگوں کے بارے میں اللہ پاک کا وعدہ ھے کہ وہ ان کا ھاتھ پکڑے گا اور ان کو لازماً اپنے تک پہنچنے کا رستہ دکھائے گا اور اللہ یقیناً محسنین کے ساتھ ھے کوئی دور نہیں ھے (( والذین جاھدوا فینا لنھدینھم سبلنا وان لمع المحسنین (العنکبوت 96 )) اس نے فرعون کے جادوگروں کی نیت بدلتے ھی ان کا ھاتھ پکڑ لیا تھا اور کچھ اس طرح پکڑا تھا کہ فرعون کی خوفناک دھمکیوں کے باوجود انہوں نے ایک جملہ کہہ کر اس کے سارے رعب داب پر پانی پھیر دیا تھا کہ لن نؤثرک علی ما جاءنا ، والذی فطرنا ، فاقض ما انت قاض ،، ھم تجھے اب اثر انداز نہ ھونے دیں گے اور ھر گز ترجیح نہ دیں گے اس پر جو ھمارے پاس کھل کر سامنے آ گیا ھے اور جس نے ھم کو بنایا ھے ،تو جو کر سکتا ھے کر لے تو ، تو صرف اس دنیائے فانی کے فیصلے کر سکتا ھے جبکہ اللہ بہترین آقا بھی ھے جس کی محبت اور انعام بھی دائمی ھے اور جس کا عذاب بھی دائمی ھے ،، قَالُوا لَنْ نُؤْثِرَكَ عَلَىٰ مَا جَاءَنَا مِنَ الْبَيِّنَاتِ وَالَّذِي فَطَرَنَا ۖ فَاقْضِ مَا أَنْتَ قَاضٍ ۖ إِنَّمَا تَقْضِي هَٰذِهِ الْحَيَاةَ الدُّنْيَا.( طہ – 72 )،، ظاھر ھے کہ جادوگروں میں یہ تبدیلی باھر سے موسی علیہ السلام کا کوئی فوری خطبہ سن کر نہیں آئی تھی بلکہ ان کے اپنے اندر کی سیٹنگز تبدیل ھوتے ھی وہ پیج ٹھک ٹھک کر کے کھلتے چلے گئے جو پچھلے 30 سال سے نہیں کھل سکے تھے اور جو علم ان کے اندر ھوتے ھوئے بھی ان کی مدد نہیں کر رھا تھا ، اندر کی نیت تبدیل ھوتے ھی ٹھک ٹھک کر کےلائن میں لگنا شروع ھو گیا ،، خدا باھر سے نہیں اندر سے ملتا ھے اور خدا تک پہنچنے کا قریب ترین اور مختصر ترین رستہ خود انسان کے اپنے اندر واقع ھے ،، جو اس دروازے کو بند کر کے خدا کو ڈھونڈنے نکلتے ھیں وہ کبھی خدا تک نہیں پہنچ پاتے ،؎
اپنے من کو بھول کر، سارا جہاں ڈھونڈا کئے ،،،
تم کہاں بیٹھے ھوئے تھے، ھم کہاں ڈھونڈا کئے ،،،
اللہ پاک نے اس مضمون کو بہترین اور مختصر ترین انداز مٰں سمجھایا ھے ،،
(( ﻓَﺈِﻧﱠﮭَﺎ ﻟَﺎ ﺗَﻌْﻤَﻰ اﻟْﺄَﺑْﺼَﺎرُ. وَﻟَﻜِﻦ ﺗَﻌْﻤَﻰ اﻟْﻘُﻠُﻮبُ. اﻟﱠﺘِﻲ ﻓِﻲ اﻟﺼﱡﺪُورِ.)) الحج ۔۔
جب دل اندھے ھو جاتے ھیں تو آنکھیں بھی رستہ دکھانا چھوڑ دیتی ھیں ،، پہلے نسخہ سمجھایا ھے کہ زمین میں گھوم پھر کر باغیوں کے اجڑے ھوئے کنوئیں اور بے مکین محلات جا کر دیکھو تا کہ تمہاری دلوں کو عقل آئے تا کہ تم وحی کی پکار پر کان دھر سکو ،،
ھدایت طلبگار کے لئے بس ایک ھی کتاب کافی ھے ،، کتاب اللہ وہ اس کو پڑھنا شروع کر دے ،، ایوان ریڈلے کو سمجھ لگ گئ ھے تو یہ سمجھ کسی سے بھی دور نہیں ھے ، جہاں کوئی بات سمجھ نہ لگے ھم بیٹھے ھیں 24 گھنٹے اسی کام کے لئے ھم سے رابطہ کیجئے ، ھم مدد کے لئے تیار بیٹھے ھیں ۔۔
دوسری قسم کے لوگ وہ ھیں جو کہتے ھیں کہ میں کافر ھونے جا رھا ھوں مجھے روک کر دکھاؤ ،،ان کا حال اس بچے کا سا ھے جو بستہ کلاس میں پھینک کر تنگ سے تنگ کھڑکی میں سے بھی ٹیڑھا میڑھا ھو کر نکل بھاگتا ھے ،، جناب کا معاملہ بڑا الگ ھے ، ھدایت کا ضابطہ طلب ھے (( و یہدی الیہ من ینیب ))،، اگر آپ کو ھدایت کی طلب نہیں تو یہ ھدایت آپ کو ملے گی بھی نہیں ، رزق بغیر طلب بھی مل جاتا ھے کیونکہ وہ مقدر ھے جبکہ ھدایت میں آپ کو آپشن دیا گیا ھے کہ من شاء فلیومن و من شاء فلیکفر ، جو چاھے وہ ایمان لائے جو چاھے کافر ھو جائے ،، جب کہ امیری اور غریبی میں ایسا نہیں فرمایا کہ جو چاھے وہ امیر ھو جائے اور جو چاھے وہ غریب ھو جائے ،، کوئی کچھ نہیں کرتا اور اس کی مٹی بھی سونا ھو جاتی ھے اور کوئی ھزار جتن کرتا ھے اور اس کا سونا بھی مٹی بنتا چلا جاتا ھے ،، اس ضابطے کو ثابت کرنے کے لئے اللہ پاک نے قرآن مثالوں سے بھر دیا ھے اور کوئی قریبی رشتہ چھوڑا نہیں کہ جس کی مثال دے کر سمجھایا نہ ھو کہ ھدایت بغیر طلب نہیں ملتی ،، آزر کو طلب نہیں تھی بیٹا نبی ھی نہیں نبیوں کا باپ ابوالانبیاء تھا ،مگر باپ کو نہیں ملی ،، نوح علیہ السلام کے بیٹے اور بیوی کو طلب نہیں تھی ،، باپ سے نہیں ملی ، بیوی کو شوھر سے نہیں ملی ،، لوط علیہ السلام کی بیوی کو اولی العزم رسول شوھر سے نہیں ملی ،، رحمۃ للعالمین کے تایا کو بھتیجے کے پڑوس میں رہ کر نہیں ملی ،،
آپ کو طلب نہیں تو آپ کا باپ بھی رسول ھوتا تو آپ کو کبھی ھدایت نہ ملتی اگرچہ وحی کا دروازہ آپ کے گھر میں کھُلتا ، پھر ھم کون ھوتے ھیں آپ کو ھدایت دینے والے ،، آپ متکبر ھیں اور سمجھتے ھیں کہ آپ کے ملحد یا مرتد ھو جانے سے اللہ پاک کا بہت نقصان ھو جائے گا لہذا اس کو زبردستی آپ کو بنانا چاھئے کیونکہ آپ جیسا ھونٹ ٹیڑھے کر کے انگریزی بولنے والا رب کو ملے گا نہیں ،، آپ بھول گئے کہ کل آپ پیشاب میں تیرنے والا ایک دمدار کیڑا تھے ،، اور بس ،، اللہ پاک نے ٹھیک مرض پکڑا ھے ، جو لوگ ھماری آیات میں بغیر دلیل کے جھگڑتے ھیں ان کے دلوں میں تکبر ھے ، وہ اپنے کفر سے اللہ کو نقصان پہنچانے کی پوزیشن میں کبھی بھی نہیں پہنچ سکتے (( إِنَّ الَّذِينَ يُجَادِلُونَ فِي آيَاتِ اللَّهِ بِغَيْرِ سُلْطَانٍ أَتَاهُمْ إِن فِي صُدُورِهِمْ إِلاَّ كِبْرٌ مَّا هُم بِبَالِغِيهِ ،،، غافر- 56 ))
اگر آپ سمجھتے ھیں کہ آپ کو ساری صلاحتیں اس لئے دی گئ ھیں کہ آپ رات دن بیٹھ کر اللہ کی غلطیاں نکالا کریں اور ھم بیٹھ کر اللہ کا دفاع کیا کریں ،، تو ویری سوری سر ،، ھمارے پاس روحانی خودکشی کرنے والوں کے لئے وقت نہیں ھے ،ھماری خدمات ان کے لئے ھیں جو ڈوب رھے ھیں اور مدد کے لئے پکار رھے ھیں ،،
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھدایت کے ضابطے
وہ دارالعلوم دیوبند کے قریب میں ایک محلے میں ایک امیر ھندو گھرانے میں پیدا ھوا تھا اور ھندوؤں کے اس مکتبہ فکر سے تعلق رکھتا تھا جو سورج کی پوجا کرتے ھیں ،، بچپن گزرا تو جوانی شروع ھوئی بچپن کی طرح اس کی جوانی بھی نرالی تھی ، وہ ایک ھمدرد اور دیالو نوجوان تھا، ھر دم ھر وقت کسی کی مدد کو تیار ! مذھبی تعصب سے بالاتر،، محلے کی سب خواتین کو ماسی کہتا ،ان کے کام کرتا ! جوانی سے اس کا معمول تھا کہ وہ صبح دارالعلوم کے کنوئیں پر سورج طلوع ھونے سے تھوڑا پہلے آتا،، پانی نکال کر اشنان کرتا اور پھر پشت سورج کی طرف کر کے اپنے سائے کی گردن پر نظر جما کر گھنٹوں کھڑا رھتا اور پھر اپنا جاپ ختم کر کے چلا جاتا ! نہ اس نے کبھی دارالعلوم کے مہتمم سے کوئی ربط ضبط بڑھانے کی کوشش کی اور نہ کبھی انہوں نے اسے کنوئیں پر نہانے اور مدرسے کے ایک کونے میں اپنی کرنے سے روکا ! وقت گزرتا رھا مہتم فوت ھو گئے اور نظم و نسق ان کے فرزند کے ھاتھ آیا ،، ادھر سوریا مہاراج بھی اب عمر کے اخری دور میں داخل ھو چکے تھے مگر معمولات میں کوئی ناغہ نہیں تھا !
آج بادل بنے ھوئے تھے اور سوریا مہاراج اشنان کر کے سورج کا انتظار کر رھے تھے مگر بادل سورج کو دبوچے بیٹھے تھے، ،، پتہ نہیں کو سوریا مہاراج پر ترس آیا یا خود ان کا موڈ مسلمان مولوی کو چھیڑنے کا بن گیا ! وہ مہتمم صاحب کے پاس جا کھڑے ھوئے جو اس وقت کیکر سے مسواک کاٹ رھے تھے ! مہاراج نہ تو آپ کے پرشوں نے ھمیں مسلمان بنانے کی کوئی کوشش کی اور نہ ھی آپ ھمیں جنت میں بھیجنے کی کوشش کرتے ھو ؟ سوریا جی نے مذاق کے انداز میں مہتمم صاحب کو چھیڑا ،، مولانا ،، نے پلٹ کر سوریا جی کو دیکھا اور ان کا ھاتھ پکڑے پکڑے اپنے دفتر میں لے آئے ،،
آپ سنایئے آج ھمارے نصیب کیسے جاگے ، آپ نے ھمیں وقت کیسے دے دیا ،،آپ جناب تو کسی کو لفٹ ھی نہیں کراتے ؟ مولانا نے مسکراتے ھوئے کہا ! دیکھو بھئ تم میرے بچوں کے سمان ھو ،مجھے غچہ دینے کی کوشش مت کرو ، پہلے میں نے کیا ھے ،جواب بھی میرا حق بنتا ھے،آخر تم لوگ ساری دنیا کو مسلمان بنانے بستر اٹھائے پھرتے ھو،، بھیا میں تمہارے پڑوس میں عمر پوری کر چلا ھوں مجھے کسی ایک بار جھوٹے منہ بھی نہیں پوچھا کہ میاں تم بھی مسلمان بننا چاھتے ھو یا نہیں؟ میاں سنا ھے پڑوسی کے تو بڑے حق حقوق ھوتے ھیں اسلام میں ،،چلو ھمیں پڑوسی کا حق ھی دے دیتے ،،
سوریا جی کی بات نے مولانا کو سنجیدہ کر دیا وہ بڑی متانت سے بولے، سوریا جی میرے والد مرحوم کی جان نکلنے سے پہلے وصیت آپ کے لئے ھی تھی،، وہ فرماتے تھے، یہ سوریا جنتی آدمی ھے اس میں ساری عادتیں اللہ کی پسندیدہ ھیں ،، بس تھوڑا کاغذی کام باقی ھے ،،یہ اندر سے مسلمان ھے،اللہ کی رحمت اس پر ٹوٹ پڑنے کو تیار ھے،، بس تم اس لمحے کے لئے تیار رھنا جب سوریا جی میں رب کی جوت جاگے گی،، اس وقت انہیں سنبھالنا تمہاری ذمہ داری ھے ! مولانا کی بات سن کر سوریا جی ھکا بکا رہ گئے ،، اچھا جی تو مولانا مرحوم بہت پہنچی ھوئی ھستی تھے،ھمیں خبر بھی نہیں لگنے دی اور ھمیں پڑھتے رھے،، خیر ،،
مولانا نے پوچھا سوریا جی آج آپ جاپ نہیں کر رھے؟ بیٹا تمہیں معلوم ھے سورج نظر نہ آئے تو اپنا جاپ رہ جاتا ھے ! اچھا سوریا جی کبھی آپ آتے ھیں تو سورج دستیاب نہیں ھوتا ،، کبھی سورج ھوتا ھے تو آپ بیمار ھوتے ھیں نہیں آتے،، آج آپ دونوں موجود ھیں مگر ایک دوسرے کو دیکھ نہیں سکتے،، یہ درمیان میں اڑچن کون ڈال دیتا ھے ؟ بادل ،، سوریا جی نے بڑے آئستہ سے کہا ،، اچھا سورج ایک ھلکے بھلکے بادل کے آگے مجبور ھو گیا،، یا کسی اور ھستی نے جو سورج سے طاقتور ھے ، اپنے حکم سے ایک اڑچن کھڑی کر دی اور سورج مہاراج آگ اگلنے کے باوجود مجبور ھو گئے ؟ سوریا جی خاموش رھے ، اچھا سوریا جی کبھی ایسا ھوا کہ آپ کے ناغے سے ناخوش ھو کر سورج نے بھی غصے سے اگلے دن ناغہ کر دیا ھو اور طلوع ھونے سے انکار کر دیا ھو ؟ ایسا کیسے ھو سکتا ھے ؟ سوریا جی نے پلٹ کر سوال داغ دیا ! ایسا کیوں نہیں ھو سکتا کیا سورج دیوتا کو غصہ نہیں آتا یا اسے آپ کے ناغے کی خبر نہیں ھوتی ،، مولانا نے نرمی سے گفتگو کو جاری رکھا،، غصہ بھی آتا ھے اور اس غصے سے پناہ کے لئے ھی ھم اس کی پوجا کرتے ھیں اور انہیں ھماری پوجا کی خبر بھی ھوتی ھے،مگر،،،،، کیا “مگر “مولانا نے بات کو جاری رکھا ! مگر سورج دیوتا مجبور ھے کہ وہ طلوع ھو ،، وہ اپنی مرضی سے طلوع غروب نہیں ھو سکتا ،، سوریا جی نے ایک سوچتی ھوئی شکل کے ساتھ جواب دیا ! مہاراج اگر دیوتا بھی مجبور ھوتے ھیں تو پھر ھماری مجبوریاں کیسے دور کریں گے؟ ایک مجبور دوسرے مجبور کی کیا مدد کر سکتا ھے ؟؟ کیوں نہ اسے مجبور کرنے والے سے ھی رجوع کر لیا جائے جو اسے طلوع و غروب کرتا ھے،، بادل بھیج کر اس کی دھوپ کو لپیٹ دیتا ھے ؟ سوریا جی چپ رھے ! مولانا نے بات جاری رکھتے ھوئے کہا،، سوریا جی آپ کے پاس چھٹی کرنے کا اختیار اور ارادہ ھے،، سورج کے پاس نہ چھٹی کا ارادہ ھے اور نہ ھی اختیار ھے !
سوریا جی مہاراج آپ کو پتہ ھے کہ اسی ارادے اور اختیار کی بنیاد پر تمام کائنات اور اس کو سنبھالنے والے ان کا نظم و نسق چلانے والے ملائکہ کو کہا گیا تھا کہ ” آدم کو سجدہ کرو،، اس کی بڑائی تسلیم کرو ،، آج کائنات میں خالق نے پہلی صاحبِ ارادہ صاحبِ اختیار مخلوق پیدا کی ھے،، خدا کے بعد ارادے کی مالک ایک ھستی پیدا کی گئ اور کائنات اور اس کو سنبھالنے والے فرشتوں کو اس آدم کے قدموں میں ڈال دیا ،جس آدم کی پشت میں آپ بھی تھے سوریا جی ،،،،،،، اور میں بھی تھا ،، آپ نے آج تک اس ارادے کو استعمال نہیں فرمایا ،،اپنے شرف کو استعمال نہیں کیا، اسے ویسے کا ویسا ھی رب کے پاس لے کر چلے جاؤ گے سوریا جی اور پھر اسے کیا منہ دکھاؤ گے؟ اس سجدے کی قیمت تو چکاتے جاؤ جو اس اختیار کے صدقے فرشتوں سے کرایا تھا ،،،
سوریا جی ” ٹک ٹک دیدم دم نہ کشیدم ” کی تصویر بنے بیٹھے تھے،،
مولوی جی پہ بھی جلال اور جمال کی دونوں صفات کا غلبہ تھا کبھی ایک آرھی تھی تو کبھی دوسری ،، لگتا تھا انہوں نے اپنے پرشوں کی بات پلے باندھ کر خوب تیاری کر رکھی تھی سوریا جی کے استقبال کی !
سوریا جی آپ بہت نیک انسان ھیں،، ھم سب نے آپ کو بچپن سے دیکھا ھوا ھے شاید کہ مسلمانوں میں بھی آپ سا ھمدرد ، سخی اور خداترس انسان پوری بستی میں نہیں ،،مگر سوریا جی پیپر ورق تو کرنا پڑے گا،، دل کے دروازے کا تالا اندر سے کھلتا ھے،، اللہ نے سنت بنا رکھی ھے اس نے نبیوں کے باپ ،بیٹوں اور بیویوں کو بھی ھدایت نہیں دی جب تک کہ انہوں نے دل کا دروازہ نہیں کھولا ،، کسی کے گھر بغیر چاھے جانے سے اللہ نے منع فرمایا ھے،،اس کا حکم ھے اسی گھر میں جاؤ ،جس گھر کا مالک انس محبت سے تمہیں بلائے،،پھر وہ آپ کے اندر بغیر انس کے بغیر آپ کے بلائے کیسے آ جائے گا ؟ اس کی رحمت کا سمندر آپ کی چارپائی کے گرد چکر کاٹتا رھتا ھے سوریا جی، بس ذرا دل کی کھڑکی کھول کے دیکھو وہ کیسے اندر آتا ھے !
سوریا جی اٹھ کر چلے تو لگتا تھا کہ وہ زمین پر نہیں پانی پر چل رھے ھیں،، زمین ان کے پاؤں تلے سے کھسک گئ تھی ! وہ رات قیامت کی رات تھی ،، دل میں گداز پیدا ھونا تھا کہ رحمت کی جھڑی شروع ھو گئ ،، سوریا جی ساری رات رو رو کر معافیاں مانگتے رھے،،وہ ڈر رھے تھے کہ وہ صبح سے پہلے کہیں مر نہ جائیں،، کہیں پیپر ورق ادھورا نہ رہ جائے ،، انہوں نے اللہ سے اپنی ساری نیکیوں کے عوض صبح تک جینے کی مہلت مانگ لی،، آج انہین زندگی کی قدر آ گئ تھی ،، صبح ابھی مدرسہ کھلنے کا وقت نہیں ھوا تھا کہ سوریا جی مہتمم صاحب کے گھر کے دروازے پر دستک دے رھے تھے !
دروازہ مولانا صاحب نے خود کھولا،،لگتا تھا وہ اسی بات کی توقع رکھتے تھے،، سوریا جی کی کیفیت سے لگتا تھا کہ جیسے ان کا پورا وجود بول رھا ھے مگر زبان جواب دے گئ ھے،، مولانا نے ان کا ھاتھ پکڑا اور اپنی بیٹھک میں لے گئے ،، سوریا جی کو چارپائی پر بٹھا کر وہ ان کے قدموں میں بیٹھ گئے ،، اور گویا ھوئے سوریا جی مہاراج ،، اپ کچھ بھی مت بولیئے ،، زبان کو بند رھنے دیجئے،، آج خود اللہ آپ کے وجود کو پڑھ رھا ھے، وہ آپ کی دعوت قبول کر کے آپ کے دل میں آ بیٹھا ھے،،سوریا جی میں اسی کے احترام میں آپ کے قدموں میں بیٹھا ھوں،، زارو قطار روتے سوریا جی کو انہوں نے خوب رونے دیا وہ جانتے تھے ھر مسلمان ھونے والا پیدا ھونے والے بچے کی طرح روتا ھوا مسلمان ھوتا ھے اور یہ صحت کی علامت ھے،جان کی صحت کی بھی اور ایمان کی صحت کی بھی !،،پھر اپنے ساتھ ناشتہ کروایا اور پھر مدرسے کے تمام طلباء کے سامنے اسلام قبول کرایا گیا ،، عبداللہ نام منتخب کیا گیا اور اسلام قبول کرنے کے ھفتہ دس دن بعد عبداللہ بھائی بس ایک بخار میں ھی اللہ کو پیارے ھو گئے !
واقعے کی تفصیلات بیان کرتے ھوئے علامہ دوست محمد قریشی فرماتے ھیں” عبداللہ بھائی کے جنازے پر لگتا تھا پورا دیوبند امڈ پڑا ھے، ایک تو وہ خود ایک انسان دوست شخصیت تھے،بلا تفریق مذھب و مسلک ھر ایک کے کام آنے والے،، اوپر سے جو اکرام مسلمانوں نے خاص کر دارالعلوم کے طلباء نے ان کا کیا ،اس نے ھندوؤں کے دلوں میں بھی گداز بھر دیا،، طلباء ان کی چارپائی کو کندھا دینے ٹوٹے پڑتے تھے ،، جنازہ شروع ھوا تو اعلان ھوا کہ جنازے میں تاخیر کی جائے کئ ھندو بھی مسلمان ھو کر جنازے میں شرکت چاھتے ھیں،، شیخ الجامعہ نے کہا کہ جو مسلمان ھونا چاھتے ھیں وہ صفوں میں کھڑے ھی ھمارے پیچھے شہادتین دھرا لیں،، باقی کام بعد میں ھوتے رھیں گے،، بہت سارے ھندوؤں نے جب شہادتین کا ورد شروع کیا تو جن کی نیت شاید مسلمان ھونے کی نہ بھی تھی وہ بھی جذبات میں بہہ گئے ،،سیکڑوں لوگ مسلمان ھوئے ،،اس کے علاوہ ان کے ھندو رشتے داروں کو بھی جنازے میں کھڑا ھونے سے نہیں روکا گیا۔
علامہ دوست محمد قریشی فاضل دیوبند کی بیان کردہ روح کے زنگ اتارتی ہوئی داستان۔
Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *