سحـــــر ھو جائے گی شامِ غریباں، ھم نہیں ھونگے !
چـــراغِ زندگی ھــو گا فــــروزاں ھم نہیں ھوں گے
چمن میں آئے گی فصلِ بہاراں ھم نہیں ھوں گے
!
جــوانوں اب تمہارے ھــاتھ میں تقــدیرِ عالــم ھے
تمہی ھو گے فروغِ بــزمِ امکاں ھم نہیں ھوں گے
!
جئیں گے وہ جو دیکھیں گے بہاریں زلــفِ جــاناں کی
سنوارے جائیں گے گیسوئے دوراں ھم نہیں ھوں گے
!
ھــمارے بعــد ھــی خــــونِ شہــــیداں رنگ لائے گا
یہی سرخی بنے گی زیبِ عنواں ھم نہیں ھوِں گے
!
اگــر ماضــی منــور تھا کبھــی تو ھـــم نہ تھے حاضـــر
جو مستقبل کبھی ھو گا درخشاں ھم نہیں ھوں گے
!
کــہیں ھــم کو دکھا دو اک کـــرن ھـــی ٹمٹــماتی سی
کہ جس دن جگمگائے گی شبستاں ھم نہیں ھوں گے
!
ھمــارے ڈوبنے کے بعــد ابھـــریں گے نئے تارے
جبینِ دھر پر چھٹکے کی افشاں ھم نہیں ھوں گے
!
ھــمارے دور مــیں ڈالــی گــئ تھــیں الــجھـنیں لاکھــوں
جنوں کی مشکلیں جب ھوں گی آساں ھم نہیں ھوں گے
!
نہ تھا اپنے نصـیبے میں طلــــــوعِ مـــہر کا جـــــلوہ
سحـــر ھــو جائے گی شـامِ غریبــــاں ھــم نہـیں ھوں گے

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *