ایں قدَر مَستم کہ از چشمَم شراب آید بروں !
وَز دلِ پُر حسرتم “دُودِ کباب ” آید بروں !
ترجمہ: میں اس قدر مستی میں ھوں کہ میری آنکھوں سے شراب باہر آ رھی ہے اور میرے حسرتوں بھرے دلِ سے کباب کی مانند دھواں ا ٹھ رہا ھے !!
ماہِ من در نیم شب چوں بے نقاب آید بروں !
زاھدِ صد سالہ از مسجد خراب آید بروں !
میرا چاند آدھی رات کو اگر بے نقاب باہر نکلے تو سو سالہ زاھد بھی مسجد سے دیوانہ بن کر نکل آئے !
صُبح دم چوں رُخ نمودی شُد ِ من قضا !
سجدہ کے باشد روا چوں آفتاب آید بروں !
صبح کے وقت جب تیرا چہرا دیکھا تو میری نماز قضا ہو گئی کیونکہ سجدہ کیسے روا ھو سکتا ہے جب کہ سورج نکل آئے ؟
ایں قدَر رندَم کہ وقتِ قتل زیرِ تیغِ اُو !
جائے خوں از چشمِ من موجِ شراب آید بروں !
میں اس قدر بلانوش ھوں کہ وقتِ قتل اُسکی تلوار کے نیچے، کی بجائے میری آنکھوں سے موجِ شراب ابل ابل کر باہر آ رھی ھے!
یارِ من در مکتب و من در سرِ رہ منتظر !
منتظر بودم کہ یارم با کتاب آید بروں !
میرا یار مکتب میں ھے اور میں راہ میں کھڑا منتظر ہوں کہ میرا یار کتاب کے ساتھ کب باہر آتا ھے ؟
قطرہٴ دردِ دلِ جامی بہ دریا اُوفتد !
سینہ سوزاں، دل کتاں، ماہی ز آب آید بروں !
ترجمہ: جامی کے دردِ دل کا ایک قطرہ دریا میں گر پڑے تو جلتے ہوئے سینے اور پارہ پارہ دل کے ساتھ مچھلیاں بھی پانی سے باہر آ جائیں ۔
(مولانا نُور الدین عبدالرحمٰن جامی)

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *