Home / Poetry / کچـھ نہیں ملتا

کچـھ نہیں ملتا


کسی کی آنکھ سے سپنے چُرا کر کچھ نہیں ملتا !
منــڈیروں سے چـراغـوں کو بجھا کر کچھ نہیں ملتا !
نہیں ملتا سکـوں ان کو کبھی پردیس جا کر بھی !
جنہـیں اپنے وطن سے دل لگا کـر کچھ نہیں ملتا !
اُسے کہہ دو کہ پلکوں پر نہ ٹانکے خواب کی جھالر !
سمنــــدر کے کنـارے گھـــر بنا کــر کچــھ نہـیں ملتا !
کوئی اِک آدھ سپنا ھو تو پھر بھی اچھا لگتا ھے !
ھزاروں خواب آنکھوں میں بسا کر کچھ نہیں ملتا !
یہ اچھا ھے کہ آپس کے بھــرم نہ ٹوٹنے پائیں !
کبھی بھی دوستوں کو آزمـا کر کچھ نہیں ملتا !
نہ جانے کون سے جذبے کی یوں تسکین کرتا ھوں !
بـظاھـــر تــو تمــہارے خــط جــلا کـر کچــھ نہـیں ملتا !
میں ان سے پیار کرتا ھوں تو مجھ کو چَین ملتا ھے !
وہ کہتے ھیں انہیں مجھ کو ستـا کـر کچھ نہیں ملتا !
تمہارے ساتھ ھی کرتا ھوں ساری راز کی باتیں !
ھر اِک کو داســتانِ غــم سنا کـر کچـھ نہـیں ملتا !
مجھے اکـثر ســتاروں سے یہــی آواز آتــی ھے !
کسی کی میں نیندیں اڑا کر کچھ نہیں ملتا !
جگر ھو جائے گا چھلنی یہ آنکھیں روئیں گی !
وصی بے فیض لوگوں سے نبھا کر کچھ نہیں ملتا!
Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *