Home / Hadith / قرآن اور حدیث میں برابری

قرآن اور حدیث میں برابری

،،،،،، اللہ اور رسول ﷺ میں برابری کے مترادف ھے !!
اگرچہ حدیث شریعت میں قانون سازی کا دوسرا اھم ترین Source ھے ، مگر ” دوسرا سورس ” ھے ،، برابر کا سورس نہیں ھے –
قرآن اور حدیث ،،،،،،،،، میں برابری کا یہ عالم ھے کہ حدیث پہ اعتراض کرو تو سکہ بند مسلمان ھی آگے سے کہتا ھے ،،،،،،، قرآن ، قرآن کرتے ھو ،، قرآن کے کلام اللہ ھونے کا کیا ثبوت ھے تمہارے پاس ؟ کوئی بتائے کہ ھم بتائیں کیا ؟ یہی ثبوت تو کفارِ مکہ بھی طلب کرتے تھے کہ قرآن کی قرانیت کا ثبوت دو کہ یہ تمہارا کلام نہیں اللہ کا کلام ھے ،، اور یہی ثبوت تو ملحدین بھی تھنکرز فورم پر مانگتے ھیں ،،،،، تو پھر ملحد ،، مکے کے کافر اور اھل سنت میں فرق کیا ھے ؟ تینوں کو قرآن کے کلام اللہ ھونے کا ثبوت درکار ھے – گزارش ھے کہ “الذین یومنون بالغیبِ ” قرآن کی قرآنیت کے بارے میں نازل ھوا تھا ،،،،،، قرآن اس اعتبار پہ کلام اللہ مانا جاتا ھے کہ محمد مصطفی ﷺ کا یہ دعوی سچا ھے کہ وہ اللہ کے رسول نامزد کیئے گئے ھیں اور اللہ ان کے ذریعے انسانوں سے خطاب کرتا ھے ، اپنا پیغام انسانیت کو منتقل کرتا ھے ، اس پیغام کا نام قرآن ھے اور پیغامبر کا نام محمد رسول اللہ ھے کیونکہ محمد ﷺ کی رسالت صحابہؓ کے لئے بھی ایمان بالغیب تھی ، وہ محمد بن عبداللہ کو دیکھتے تھے اور محمد رسول اللہﷺ پہ ایمان بالغیب رکھتے تھے ، وہ کلام اللہ کو محمد مصطفی ﷺ کی آواز میں ان کے منہ سے سنتے تھے اور مجرد ان کے قول کی بنیاد پر اسے کلام اللہ اور قرآن سمجھتے تھے اسی ایمان بالغیب کا نتیجہ ھے کہ قرآن کی سورہ فاتحہ کی بسم اللہ سے لے کر سورہ الناس کی والناس تک کسی آیت یا سورت کے ساتھ عن فلان قال ،، قال رسول اللہ قال اللہ تبارک تعالی نہیں لکھا ھوا ،،، قرآن خود محمد مصطفی ﷺ کی رسالت کی سند بھی ھے اور مسند بھی ،، وکفی باللہ شھیداً – محمدۤ رسول اللہ ،،، محمد کی عظمت و عصمت کا گواہ اللہ ھے اور جبریل کی عظمت و عصمت کا گواہ بھی اللہ ھے ،،،،،،،، اس کے بعد پوری امت اس کی حامل ھے ،،، کوئی ایک فرد نہیں ،، جس کے ضعف کا کسی کو ڈر ھو ،، اور جس کے ضعف کی وجہ سے قران کی کوئی سورت یا آیت ضعیف شمار ھو ،حضرت عائشہ صدیقہؓ کا یہ فرمان کہ ” کانَ خلقہ القرآن ” واضح کرتا ھے کہ نبی کی سیرت قرآن میں ھے اور قرآن نبی ﷺ کی سیرت ھے ،جن کا ھم سے قرآن میں مطالبہ ھے وہ پہلے سے محمدﷺ کی ذاتِ اقدس میں موجود ھے اسی لئے ” ان کے پیچھے چلو ” کا حکم دیا گیا ،، اور جو کچھ وہ تمہیں دو اسے لے لو ،، ثابت کرتا ھے کہ نبی کا دیا ھوا قران میں موجود ھے ،،،،،،،،،،، اب اگر کوئی ھمیں یہ ھضم کرانے کی کوشش کرے کہ جس طرح احادیث 6 لاکھ میں سے 4000 منتخب کی گئیں تھیں ، اسی طرح سورہ الاحزاب بھی 286 آیات میں سے منتخب کر کے 73 آیات چنی گئی تھیں تو ھم کیسے مان لیں ؟ یا 300 قاریوں کے مجمعے میں ابو موسی الاشعری ؓ سے کہلوایا جائے کہ اے قاریو قران کو مسلسل پڑھتے رھو ،ورنہ بھول جاؤ گے ،پہلے ھی مسبحات کے برابر سورت قرآن میں نہیں ملتی ، اس کی بس ایک آیت مجے یاد رہ گئ ھے ” آدم کے بیٹے کے لئے سونے کی ایک وادی ھو تو وہ دوسری کی تمنا کرے گا ، اور دوسری ھو تو تیسری کی تمنا کرے گا ” ( حالانکہ سب جانتے ھیں کہ یہ حدیثِ قدسی ھے ) اب ظاھر ھے ھم اس قسم کی روایات کو یہ اجازت نہیں دے سکتے کہ وہ ھمارے ایمان بالقران کو ھی متزلزل کر دیں ،،، قرآن کی مروجہ سند جن دو راویوں سے چلائی گئ ھے ،دونوں روایتِ حدیث میں ضعیف ھیں اور دونوں شیعہ ھیں اور امام جعفر صادق کے ساتھیوں میں سے ھیں ، دونوں کی روایتیں شیعہ کتب میں موجود ھیں ،، اور لوگ کہتے ھیں کہ شیعہ قرآن کو نہیں مانتے ،، وہ تو قرآن کے راوی دیتے ھیں ،،،
سبب تبني الشيعة لرواية حفص فقط :
بعض الأحاديث الضعيفة :
مشكل الآثار للطحاوي – حديث:247
ولقد حدثني إبراهيم بن أحمد بن مروان الواسطي , حدثنا محمد بن خالد بن عبد الله الواسطي قال : سمعت حفص بن سليمان الكوفي , عن عاصم قال : قال أبو عبد الرحمن : ” قرأت على علي فأكثرت وأمسكت عليه فأكثرت وأقرأت الحسن والحسين حتى ختما القرآن ولقيت زيد بن ثابت بحروف القرآن فما خالف عليا في حرف ” فلو أضاف مضيف قراءة عاصم كلها إلى النبي عليه السلام لما كان معنفا *
جامع البيان في تفسير القرآن للطبري – سورة المائدة
ذكر من قال : عنى الله بقوله : وأرجلكم إلى الكعبين – حديث:10411
حدثني الحسين بن علي الصدائي , قال : ثنا أبي , عن حفص الغاضري , عن عامر بن كليب , عن أبي عبد الرحمن , قال : قرأ علي الحسن والحسين رضوان الله عليهما , فقرأا : وأرجلكم إلى الكعبين فسمع علي رضي الله عنه ذلك , وكان يقضي بين الناس , فقال : وأرجلكم هذا من المقدم والمؤخر من الكلام ”
و كذلك نظرة الشيعة لرواة هذه القراءة (نقلا عن موقع شيعي) :
فرأس سلسلتها هو الإمام علي عليه السلام وقرأ عليه أبو عبد الرحمن السلمي وهو شيعي ، وقرأ عليه عاصم بن بـهدلة وهو شيعي كما مر ، وقرأ عليه تلميذه حفص بن سليمان وهو شيعي ، فكلهم من الشيعة .
حفص بن سليمان من أصحاب الإمام جعفر الصادق عليه السلام وقد أسند عنه
حاله في رواية الحديث :
كان واهيا في الحديث باتفاق العلماء , فجل تركيزه كان على الإقراء بالقرآن , و الأحاديث المروية عنه قليلة إذا قارناها بزميله أبي بكر بن عياش(شعبة) أو أستاذه عاصم , و هي على قلتها أغلبها ضعيف , فلم يكن يتقن هذا الشأن و لكل علم أهله و ناسه.

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *