Home / Islam / عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے ایمان لانے کا حقیقی واقعہ

عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے ایمان لانے کا حقیقی واقعہ

عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے لانے حقیقی واقعہ ،، جبکہ ھمیں ایک لمبی دردناک کہانی کے پیچھے لگا دیا گیا !
قال : فجئت المسجد أريد أن أطوف بالكعبة ، فإذا رسول الله صلى الله عليه وسلم قائم يصلي ، وكان إذا صلى استقبل الشام ، وجعل الكعبة بينه وبين الشام ، وكان مصلاه بين الركنين : الركن الأسود ، والركن اليماني . قال : فقلت حين رأيته ، والله لو أني استمعت لمحمد الليلة حتى أسمع ما يقول ! قال : فقلت : لئن دنوت منه أستمع منه لأروِّعنه ؛ فجئت من قبل الحجر ، فدخلت تحت ثيابها ، فجعلت أمشي رويدا ، ورسول الله صلى الله عليه وسلم قائم يصلي يقرأ القرآن ، حتى قمت في قبلته مستقبله ، ما بيني وبينه إلا ثياب الكعبة .
قال : فلما سمعت القرآن رق له قلبي ، فبكيت ودخلني الإسلام ، فلم أزل قائما في مكاني ذلك ، حتى قضى رسول الله صلى الله عليه وسلم صلاته ، ثم انصرف ، وكان إذا انصرف خرج على دار ابن أبي حسين ، وكانت طريقه ، حتى يجزع المسعى ، ثم يسلك بين دار عباس بن عبدالمطلب ، وبين دار ابن أزهر بن عبد عوف الزهري ، ثم على دار الأخنس بن شريق ، حتى يدخل بيته . وكان مسكنه صلى الله عليه وسلم في الدار الرقطاء ، التي كانت بيدي معاوية بن أبي سفيان .
قال عمر رضي الله عنه : فتبعته حتى إذا دخل بين دار عباس ، ودار ابن أزهر ، أدركته ؛ فلما سمع رسول اله صلى الله عليه وسلم حسي عرفني ، فظن رسول الله صلى الله عليه وسلم أني إنما تبعته لأوذيه فنهمني ، ثم قال : ما جاء بك يا ابن الخطاب هذه الساعة ؟ قال : قلت : جئت لأومن بالله وبرسوله ، وبما جاء من عند الله ؛ قال : فحمد اللهَ رسولُ الله صلى الله عليه وسلم ، ثم قال : قد هداك الله يا عمر ، ثم مسح صدري ، ودعا لي بالثبات ، ثم انصرفت عن رسول الله صلى الله عليه وسلم ، ودخل رسول الله صلى الله عليه وسلم بيته .
قال ابن إسحاق : والله أعلم أي ذلك كان
عمر ابن الخطاب فرماتے ھیں کہ میں رات کو طواف کے لئے آیا تو نبئ کریم تہجد پڑھ رھے تھے، آپ عمر فاروقؓ کو دیکھ کر آواز کو عموماً دھیما کر لیتے تھے تا کہ وہ قرآن سن کر اس کی کر کے کہیں شقی القلب نہ بن جائیں کہ پھر ایمان کی توفیق سلب کر لی جائے ،
عمر فاروق بیان کرتے ھیں کہ نبئ کریم نماز پڑھتے وقت کعبے کو بیچ رکھ کر شام یعنی بیت المقدس کی طرف منہ کیا کرتے تھے تا کہ دونوں کی طرف منہ ھو جائے ، آپ رکنِ یمانی اور حجر اسود کے درمیاں کھڑے ھوتے ،میں پچھلی طرف سے بیت اللہ کی ساتھ چمٹ کر غلاف کے اندر ھو گیا اور آئستہ آئستہ چلتے بالکل محمدﷺ کے سامنے آ گیا ان کے اور میرے درمیان صرف کپڑے کا حجاب تھا ،، آپ قرآن ( سورہ طہ ) پڑھ رھے تھے اور قرآن میرے اندر گھر بناتا جا رھا تھا تا آنکہ میں نے سسکنا شروع کر دیا ،، پھر نبی کریمﷺ جب نماز ختم کر کے چلے تو میں بھی نکل کر پیچھے پیچھے چل پڑا ،یہانتک کہ جب آپ عباسؓ اور ابن ازھر کے گھر کے درمیان تھے کہ میں آپﷺ تک پہنچ گیا ، آپﷺ نے میرے قدموں کے ردھم سے جان لیا کہ میں عمر ھوں ،اور شاید آپ کو اذیت پہنچانے کے لئے آپ کا پیچھا کر رھا ھوں – آپ پلٹے اور فرمایا خطاب کے بیٹے تو اس گھڑی یہاں کیا کر رھا ھے ؟ میں نے عرض کیا کہ میں اللہ اور اس کے رسول پر اور جو کچھ وہ اپنے رب سے لائے ھیں یعنی قرآن اس پر ایمان لانے حاضر ھوا ھوں ،، آپ نے اللہ کی تعریف کی ،الحمد للہ کہا اور فرمایا کہ اے عمر اللہ نے تمہیں ھدایت دے دی ھے میرے سینے پہ ھاتھ پھیر کر مجھے استقامت کی دعا دی ،پھر میں رسول اللہ ﷺ سے الگ ھو گیا اور آپ ﷺ اپنے گھر میں داخل ھو گئے

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *