Home / Humanity / ایک عورت کئ کہانیاں ! عورت قرآن کی نظر میں

ایک عورت کئ کہانیاں ! عورت قرآن کی نظر میں

ھمیں تعجب اس بات پر ھوتا تھا کہ ایک طرف برگر فیملی کی خواتین کے خلاف مظاھرے کر کے آزادی طلب کر رھی ھوتی ھیں ( حالانکہ ان کا جلوس نکالنا ھی بتا رھا ھوتا ھے کہ ان کو سب آزادی حاصل ھے ) دوسری جانب ان کو جلوس کے لئے فنڈ دینی والے یورپی ممالک کی خواتین دھڑا دھڑ مسلمان ھوئے چلی جا رھی ھیں ،یہانتک کہ بڑے بڑے گھرانوں میں اسلام نے نقب لگا لی اور خاص کر ٹونی بلیئر کی سالی نے تو نہ صرف خود اسلام قبول کیا بلکہ ٹونی بلیئر کو بھی آدھا مسلمان کر لیا ، مرنے سے پہلے باقی آدھا مسلمان ھونے کا اس کا پروگرام،، دعا کریں کہ وہ مرنے سے پہلے لمبی بیماری میں مبتلا ھو تاکہ اسے باقی آدھا اسلام قبول کرنے یعنی اعلان کرنے کا موقع نصیب ھو جائے ،،بس اب اعلان ھی باقی ھے اور اعلان ھی مشکل ھے !! اگر کوئی کارڈیک اریسٹ ھو گیا تو اعلان رستے میں ھی رہ جائے گا !
تو عالیــجــاہ !
ھم نے بھی اس کتاب کو جو کہ اللہ کی آخری کتاب ھے، بغور پڑھنا شروع کیا گویا کہ پہلی دفعہ اسٹڈی کر رھے ھیں ! اور خاص طور پر خواتین کے واقعات پر توجہ مرکوز کی تو ایک نئ دنیا منکشف ھوئی اور سمجھ لگ گئ کہ کیوں پڑھی لکھی خواتین کو اسلام کھینچ لیتا ھے ! یہ یورپ کی پڑھی لکھی خواتین کی بات کر رھا ھوں ” اپنے یہاں تو جو ” ھاف سلیو پہننا شروع کر دے،جس کا دوپٹہ ایک پٹی رہ جائے اور صرف ھنگامی زکام میں ناک پونچھنے کے لئے گلے میں ڈال لیا جائے ! سرخی ذرا گہری ھو جائے پاوڈر ایک ھی دفعہ اتنا تھوپ لے کہ دوسری خاتون بھی ھاتھ پھیر کر تیمم کر لے ! تو وہ اپنے آپ کو پڑھا لکھا کہنا شروع کر دیتی ھے ! اللہ پاک نے جس جس انداز میں عورت کا ذکر قرآن میں کیا ھے، اس کے ھر روپ کو ایک مقام عطا کر دیا ،،بطور ماں، بیوی ،بیٹی ،بہن ھر روپ میں اس کی صلاحیتوں کو سراھا ھے اور بڑے بڑے تاریخی واقعات کہ جن کے گرد مذاھب گھومتے ھیں ،، وہ عورت سے شروع ھوئے ، اور عورت نے ھی انہیں ایک انجام تک پہنچایا ! اللہ پاک نے ان بڑے واقعات میں جس قدر عورت پر اعتماد کیا ھے، اس کا عشر عشیر ھمارے گھروں ،معاشرے اور ھمارے رویوں میں نظر نہیں آتا ،، وہ مذھب کہ ھزاروں انبیاء جس کی شریعت کے پابند رھے وہ اول ، آخر اور درمیان سارے کا سارا عورت کے گرد گھومتا ھے ! عورت بہترین فوری اقدام کرنے والی ،، بہترین مشاھدہ کار یعنی آبزرور اور جاسوس ،بہترین مشیر بہترین وکیل ھے ! اور بہترین حکمران بھی ! میں جو واقعات لکھنے لگا ھوں اور جن کو اپنے استدلال کی بنیاد بنانے لگا ھوں وہ سب قران حکیم سے لئے گئے ھیں ! اگر کوئی اختلاف رکھتا ھے تو قرآن سے کم کسی دلیل کو میں قبول نہیں کروں گا ! 1- عورت کا جھٹ سے بڑا فیصلہ لے لینا ! قران میں سب سے پہلے حضرت مریم علیہا السلام کی والدہ ‘زوجہ عمران ‘کا ذکر شروع ھوتا ھے اور اچانک بریکنگ نیوز کی طرح کے واقعے سے شروع ھوتا ھے کہ عمران کی زوجہ نے اعلان کیا کہ اے پروردگار میں اپنا پیٹ والا بچہ دنیاوی ذمہ داریوں سے آزاد کر کے تیری نذر کرتی ھوں تو اسے قبول فرما ! مریم علیہ السلام کے والد زندہ ھیں ،، مگر اس واقعے کی پکچر سے مکمل طور پر باھر ھیں،، گویا اللہ کے نزدیک ناقابلِ ذکر ھیں ،،ان کا کوئی کردار نہیں ،ایک عورت فیصلہ کر لیتی ھے کہ اس نے بیٹے کو کیا بنانا ھے ! پھر جب وہ بچہ بیٹے کی بجائے بیٹی ثابت ھوتی ھے تو بھی وہ بیٹھ کر شوھر سے نہیں کرتیں بلکہ بیٹی بھی نذر کر دیتی ھیں اور یہ بنی اسرائیل کی ساری تاریخ میں پہلا موقع ھے کہ کوئی لڑکی معبد کی نذر کی جائے ،، اس ایک فیصلے نے نہ صرف سابقہ ساری تاریخ بدل ڈالی بلکہ آنے والے زمانوں کا رخ متعین کر دیا اور یہ فیصلہ ایک عورت نے لیا ! فیصلہ کن فطرت کی دوسری مثال ام موسی علیہا السلام ھیں وہ بھی زوجہ عمران ھیں مگر وھاں ان کا ذکر عمران کی زوجہ کی بجائے ام موسی علیہ السلام کی حیثیت سے کرایا گیا ھے،، مریم علیہا السلام کے واقعے میں بیوی کی حیثیت اور موسی علیہ السلام کے واقعے میں ماں کی حیثیت سے فیصلہ لینے کی صلاحیت کو اجاگر کیا ھے،قران میں سب سے زیادہ موسی علیہ السلام کا تذکرہ ھے اور اسی نسبت سے ام موسی کا کردار ! اللہ پاک نے موسی علیہ السلام کی ماں کو وحی کی کہ اسے تابوت میں ڈالو اور تابوت کو دریا برد کر دو ! یہاں بھی شوھر موجود ھے مگر فیصلے میں نہ ھونے کے برابر ھے ! بیوی ھی سارا فریضہ سرانجام دیتی ھے اور وھی رب کے خطاب اور وحی کا مہبط بنتی ھے ! یہی معاملہ مریم علیہا السلام کا ھے ! کہ جب ان کی والدہ نے عرض کیا کہ میرے مالک میں نے تو بیٹی جن دی ھے، یعنی بیٹے کی توقع میں منت مانی تھی مگر بیٹیاں تو کوئی معبد کو نہیں دیتا ،، اللہ پاک فرماتا ھے کہ اللہ بخوبی جانتا تھا کہ اس نے کتنی عظیم ھستی پیدا کی ھے،بے چاری کو کیامعلوم کہ بیٹا ھوتا بھی تو اس بیٹی جیسا کبھی نہ ھوتا، معبد میں لوبان جلاتا ، جھاڑو دیتا اور آنے والوں کا استقبال کرتا اس کے سوا اس نے کرنا کیا تھا،، ولیس الذکر کالانثی ” اور لڑکا لڑکی جیسا نہ ھوتا ” ایک عظیم آیت ھے،ایسی آیت اگر مرد کے بارے میں نازل ھو جاتی تو پتہ نہیں مرد حضرات کیا کچھ کرتے ! پھر جب اس بچی کو معبد کو سونپ دیا گیا اس کی توجہ اور ارتکاز کا یہ عالم تھا کہ گویا وہ جہاں ھوتی خدا ان کے پاس ھوتا ! ان کو رنگ برنگ کے بے موسم کے پھل فراھم کرتا ،، یہانتک کہ اللہ کا نبی زکریا علیہ السلام بھی اس تعلق سے بے خبر رھتے ھیں اور جب انہیں اس بات کا ادراک مریم کی زبان سے ھوا کہ اس مجلس میں معاملہ کہاں تک پہنچا ھوا ھے تو ،، بے ساختہ وہ بھی ایسی ھی لائق اور اللہ کی منظورِ نظر مانگنے پر مجبور ھو گئے ! پھر فرشتوں کا ھر وقت مریم علیہا السلام کو گھیرے رھنا اور نبی عیسی علیہ السلام کی معجزانہ تخلیق کا بوجھ بھی عورت مریم کے کندھوں پہ ڈال دینا اور انہیں اس امتحان کے لئے چن لینا عورت کی بحیثیت ماں عظمت کا شہکار ھے ! عورت بحیثیت آبزرور یا جاسوس ! جاسوسی اور مشاھدے کی صلاحیت اللہ نے عورت ذات میں کوٹ کوٹ کر بھری ھے، اس میں کوئی استثناء نہیں ھے کہ وہ عورت دیہاتی ھے یا شہری ،،پڑھی لکھی ھے یا ان پڑھ،، گوری ھے یا کالی ،،موٹی ھے یا پتلی ،، لمبی ھے یا چھوٹی ،،بچی ھے یا بوڑھی ! مشاھدہ اور تجسس و جاسوسی نیز اپنے تأثرات کو چھپا لینے کی صلاحیت جس قدر عورت کو ودیعت کی گئ ھے،مرد کو اس کا عشرِ عشیر بھی نصیب نہیں ! کوئی مرد اپنے آپ کو یا اپنے تاثرات کو بیوی سے نہیں چھپا سکتا،وہ آفس میں جھگڑ کر آیا ھے تو گھر میں گھستے ھی ،بیوی پہلا کرے گی، ” کسے نال لڑ کے آئے او؟ اگر آپ باھر کوئی منظر دیکھ کر
آئے ھیں تو پہلا سوال ھو گا” کیا دیکھا ھے ؟ خوش کیوں ھو ؟ وہ جو کہا گیا ھے کہ جس نے کر لی اس نے آدھا ایمان محفوظ کر لیا ،، اس کا مطلب یہ نہیں کہ بیوی کر لینے سے مرد کے جذبات آدھے سو جاتے ھیں بلکہ اس کا مطلب ھے کہ ان پر ایک دقیق نگران بٹھا دیا جاتا ھے ! جو اس سکائی لیب کو کنٹرول کرتا رھتا ھے ! موسی علیہ السلام کو دریا میں پھینک دینے کے بعد موسی علیہ السلام کی والدہ نے اپنے دس سالہ بیٹے کی بجائے بیٹی کو جاسوسی کے لئے چنا اور حکم دیا کہ قصۜیہہ،، اس کے پیچھے پیچھے جا ! بس ماں نے تو اتنا ھی حکم دیا تھا،، مگر 9 سالہ بیٹی نے تو کمال ھی کر دیا ! اللہ پاک اس معصوم کی ادا کا ذکر فرماتے ھیں کہ بچی دریا کے کنارے تابوت کے ساتھ ساتھ کچھ اس طرح چل رھی تھی کہ گویا وہ اجنبی ھے اور اس کا دریا میں تیرتے تابوت کے ساتھ نہ کوئی تعلق ھے اور نہ ھی تجسس ! فبصرت بہ عن جنبٍ و ھم لا یشعرون” اس نے نظر رکھی اس پر اجنبی بن کر اور انہیں محسوس بھی نہ ھونے دیا ! پھر جب تابوت پکڑ لیا گیا تو وہ گھر کی طرف خبر دینے نہیں دوڑی ،، بلکہ وہ موسی کو کھونا اور نظر سے اوجھل کرنا نہیں چاھتی تھی جب تک کہ ان کا اخری ٹھکانہ نہ دیکھ لے ! وہ سارے مجمعے میں ایک اجنبی کی طرح تماشہ دیکھتی رھی،، ایکسٹرا ویجیلینس کا مظاھرہ بھی نہیں کیا کہ کوئی شاھی جاسوس ان کی دلچسپی کو محسوس نہ کر لے ،، مگر جہاں بولنا چاھئے تھا وھیں وہ بولی اور اس طور پہ بولی اور ان الفاظ کا انتخاب کیا کہ پھر اپنے تعلق کو صاف چھپا گئ،، جب بچہ دوددھ نہیں پی رھا تھا تو اس نے نارمل انداز میں تجویز دی کہ ایک گھرانہ ھے جو بچوں کو دودھ پلاتا ھے اگر اس کو یہ بچہ دے دیا جائے تو وہ اس کو خیر خواھی سے پالیں گے اور دودھ بھی پلائیں گے کیونکہ ان کو اس کا تجربہ ھے ! تجویز منظور ھو گئ اور وہ 9 سالہ بچی ماں کے لئے نوکری بھی ڈھونڈ لائی ،، بھائی کا مستقبل بھی محفوظ کر لیا ،، میں کہا کرتا ھوں کہ شاید ھارون علیہ السلام ھوتے تو وہ ” ھائے میرا ویر کہہ کہہ کر لپٹ جاتے بچے سے خود بھی مرتے اور بھائی کو بھی مروا دیتے لہذا اللہ پاک نے نہایت حکمت سے ماں بیٹی کا انتخاب کیا اس تاریخی موڑ پر ،، سورہ القصص کا اسٹارٹ ھی معرکہ الآراء ھے،،ھم نے یہ فیصلہ کیا کہ بنی اسرائیل پر احسان کیا جائے اور ان ھی کو لیڈر بنایا جائے اور ان ھی کو حکومت کا وارث بنایا جائے اور ان کو ملک میں تمکن عطا کیا جائےاور فرعون ھامان اور ان کے لشکروں کو وہ کر کے دکھا ھی دیا جائے جس کا وہ خدشہ محسوس کر رھے تھے،( اور اسی خدشے کے پیشِ نظر بچوں کا قتل عام کر رھے تھے ) و اوحینا الی ام موسی ،،، ان تمام خدائی فیصلوں کے ظہور میں لانے کا بوجھ موسی کی ماں پر ڈال دیا،،اور ھم نے وحی کی موسی کی ماں کو ،، عورت تیری عظمت کو سلام ھے،، تجھ پر تیرے رب کے اعتماد کو سلام ھے !
موسی علیہ السلام کی زندگی میں جب بھی کوئی نیا موڑ آیا کسی نہ کسی عورت کی وجہ سے ھی آیا – ان کی زندگی کو نیا موڑ دینے ھمیشہ عورت استعمال کی گئ ! وہ جب بھی انتہائی مطلوب ھوئے انہین بچانے کے لئے اللہ پاک نے عورت کو ھی بھیجا !! فرعون کے محل میں آپ کا داخلہ کچھ اس شان سے ھوا کہ آپ انتہائی مطلوب ھستی تھے، وہ مطلوب جس کو اس کی ماں نے بھی پناہ نہیں دی اور اٹھا کر سمندر میں ڈال دیا ،، وہ مطلوب جس کے شک میں گر ھزاروں نہیں تو سیکڑوں بچے ضرور مروا دیئے گئے ! مگر جب وہ انتہائی مطلوب ھستی فرعون کے گھر پہنچی یعنی شیر کی کھچار میں پہنچی تو ایک عورت خم ٹھونک کر کھڑی ھو گئ ! و قالت أمرأۃ فرعون قرۃ عینٍ لی و لک لا تقتلوہ ،، اور کہا فرعون کی زوجہ نے یہ تو میری اور تیری آنکھوں کی ٹھنڈک ھے مت قتل کرو اسے ،، عسی ان ینفعنا او نتخذہ ولداً،، ھو سکتا ھے کہ یہ ھمیں نفع دے دے یا ھم اس کو اپنا بیٹا ھی بنا لیں ! یوں فرعون کی عقل اسے کچھ اور سمجھا رھی تھی،، ھامان اپنی سی کوشش کر رھا تھا اور آسیہ ڈٹ کر کھڑی تھی وہ مسلسل اصرار کرتی رھیں تا آنکہ فرعون نے موسی علیہ السلام کے قتل کا فیصلہ منسوخ کر دیا ! موسی رائل فیملی کا حصہ بن گئے ،، اور پھر آپ سے قتل خطا ھو گیا ،، ایک قبطی آپ کے ھاتھ سے غلطی سے قتل ھو گیا اور اب پھر آپ کے قتل کے لئے شوری بیٹھ گئ،،شوری نے موسی علیہ السلام کے قتل پر اتفاق کر لیا اور آل فرعون کے ایک شخص کی وجہ سے آپ کو بروقت اطلاع مل گئ ،یوں آپ خالی ھاتھ لگے کپڑوں میں صحراء کی جانب روانہ ھو گئے،،جس طرف اللہ لے جائے مجھے تو رستے کا کوئی اندازہ نہیں ،، اب موسی پھر موسٹ وانٹیڈ ھو چکے تھے،، آپ کی تلاش میں ھرکارے پھر رھے تھے اور بھوکے پیاسے در بدر موسی علیہ السلام کو پناہ دینے اور ان کی زندگی کو نبوت کی صان چڑھانے اور تربیت دینے پھر دو عورتیں کنوئیں پر منتظر کھڑی تھیں ! یہ دو عورتیں ھی نہیں اپنے باپ کے وہ بیٹے بنی ھوئی تھیں جنہوں نے گھر کا سارا معاشی بوجھ اپنے نازک کندھوں پر اٹھایا ھوا تھا اور اللہ کی طرف سے کسی ریلیف کی منتظر تھیں کہ موسی علیہ السلام کی صورت میں ریلیف آ پہچی ، دیکھئے اللہ پاک کس طرح ایک ھی واقعے سے کتنے رنگ پیدا کرتا ھے ! موسی علیہ السلام نے پوچھا سارے چرواھے تو پانی پلا رھے ھیں ، آپ دونوں کا معاملہ کیا ھے کہ اس طرح ھٹ کر کھڑی ھیں ؟ جواب دیا گیا کہ ھم تب تک پانی نہیں پلا سکتیں جب تک سارے چرواھے پانی پلا کر فارغ نہ ھو جائیں !! آپ نے ڈول پکڑا اور ان بہنوں کے جانوروں کو پانی پلا دیا ! بچیاں جب روزانہ کے معمول سے جلدی گھر پہنچیں تو باپ کو تعجب ھوا ،پوچھا کیا ماجرا ھوا ؟ جواب دیا گیا کہ ایک اللہ والا پردیسی جوانمرد کھڑا تھا اس نے جھٹ پٹ پانی پلا دیا،،حکم ھوا اس پردیسی کو بلایا جائے کہ اس کو جزاء بھی دی جائے اور اس کا واقعہ بھی سنا جائے ! ادھر موسی پانی پلا کر فارغ ھوئے تو اسی درخت کے تلے جا کھڑے ھوئے جہاں وہ بہنیں کھڑی تھیں اور اپنی وہ مشہور دعا مانگی جسے پڑھ کر دل بھر آتا ھے ،، شاھی خاندان کا پروردہ ، رائل اکیڈیمی کا تربیت یافتہ ،، اللہ سے کلام کرتا ھے،، قال رب انی لما انزلت الیۜ من خیر فقیر ،، میرے رب میں ھر اس خیر کا فقیر ھوں جو بھی تو مجھے بھیج دے !! اور ایک عورت مدد کے روپ میں نمودار ھوتی ھے ! ان میں سے ایک جو بڑی بھی تھی اور ھوشیار بھی،وہ سراپا حیا بنے ،حیاء کی چال چلتے ھوئے آئی اور موسی علیہ السلام کو کہا کہ ھمارے ابا جان آپ کو بلا رھے ھیں وہ آپ کو بدلہ دینا چاھتے ھیں اس نیکی کا جو آپ نے ھمارے حق میں کی ھے ! موسی علیہ السلام جب شیخِ مدین کے گھر پہنچے تو ساری کہانی سنا دی ،، بابا جی نے تسلی دی کہ آپ فکر مت کریں آپ ظالم قوم کے علاقے سے نکل آئے ھیں ! اسی لڑکی نے جس نے موسی علیہ السلام سے پہلی دفعہ کلام کیا تھا،، پھر باپ سے بات کی تھی پھر موسی علیہ السلام کو بلانے آئی تھی ،، باپ کو مشورہ دیا کہ ابا بندہ امانت دار بھی ھے کیونکہ اس نے آنکھوں کی خیانت بھی نہیں کی اور قوت والا بھی ھے،، اور ایسا ھی قوی اور امین ھمارے گھر کی ضرورت تھا آپ ان سے نوکری کی بات کیوں نہیں کرتے ؟ مشورہ قبول کر لیا گیا اور موسی علیہ السلام سے ایک محرم رشتہ قائم کرتے ھوئے اسی بچی کا نکاح 8 کی بکریاں چرانے کی مشقت کے عوض کر لیا گیا ،، یوں پہلا بندہ جس نے بیوی کی خاطر بکریاں چرائیں وہ موسی علیہ السلام تھے،، وھیں آپکی تربیت کی گئ کیونکہ بکریاں چرانا ھر نبی کی سنت رھی ھے،، شاھی خاندان کے پروردہ شہزادے نے 10 سال بکریاں چرائیں اور 10 سال بعد بیوی لے کر واپسی کی راہ کا سفر اختیار کیا ! دوران سفر آپ قضائے الہی سے رستہ بھول گئے ، اور آپکی زوجہ کو دردِ زہ شروع ھو گیا ،، دھند نے زمین آسمان ایک کر رکھا تھا کہ کچھ سجھائی نہ دیتا تھا جبکہ زچہ و بچہ کو اس شدید سردی میں آگ اور حرارت کی ضرورت تھی ! یوں بیوی کی خاطر آگ متلاشی موسی کی نظروں کو وہ آگ دکھائی گئ ،،جس کو وہ لینے پہنچے تو آگ کی بجائے پیغمبری تھما دی گئ ،، اور آپ کو اسی فرعون کی طرف رسول بنا کر بھیج دیا گیا جو آپ کے قتل کا خواھشمند تھا !
قرآن کی بیان کردہ مدبر اور کامیاب حکمران ” ملکہ سبا بلقیس ” ! قرآنِ حکیم نے جہاں انبیاء پر لگائے گئے الزامات سے ان کا دامن صاف کیا ھے وھیں ملکہ سبا بلقیس کے بارے میں بھی یہود کی ھرزہ سرائیوں کا منہ توڑ جواب دیا اور انہیں ایک مدبر اور اپنے عوام سے محبت کرنے والی ایک ذھین مسلمان ملکہ کے طور پر پیش کیا ھے ! جب حضرت سلیمان علیہ السلام نے اسے خط لکھا تو اس نے اپنی شوری کا اجلاس بلایا ،،جبکہ وہ مشرک اور سورج کی پوجا کرنے والی تھی ،،مگر قرآنی خبر ” و امرھم شوری بینھم ” کہ مسلمانوں کے معاملات آپس کے مشورے سے طے ھوتے ھیں کا مصداق تھی ! شوری کے دوران سرداروں نے جنگ کی طرف میلان ظاھر کیا اور اپنی قوت اور تجربے کا حوالہ دیا مگر آخری فیصلہ ملکہ پر ھی چھوڑ دیا ! ملکہ نے ان سے تاریخ کا نچوڑ صرف ایک جملے میں بیان کر دیا ،، اور اللہ پاک نے ملکہ کے قول کی تائید فرمائی ! اس نے کہا ” دیکھو یہ بادشاہ لوگ جب فاتح ھو کر کسی بستی میں گھستے ھیں تو وھاں فساد بپا کر دیتے ھیں اور اس بستی کے عزیز ترین لوگوں کو ذلیل ترین بنا دیتے ھیں ،، اللہ پاک نے فرمایا ،، و کذالک یفعلون “بالکل اسی طرح کرتے ھیں ! آج بھی ھم دیکھتے ھیں کہ کا قول کتنا ٹو دا پؤائنٹ ھے،، عراق اور لیبیا کو دیکھ لیں،،کل تک جو عہدوں اور طاقت کے لحاظ سے ٹاپ ٹین تھے وہ اگلے دن موسٹ وانٹیڈ لسٹ میں ٹاپ ٹین پر تھے ! پھر اس نے جنگ کے آپشن کو رد کر کے کہا کہ میں ایک وفد بھیج رھی ھوں جو وھاں جا کر صورتحال کا جائزہ لے گا اور اس کی رپورٹ پر ھی اگلا قدم طے کیا جائے گا ! اپنے سفراء کی رپورٹ سے غیر مطمئن ملکہ نے خود دورہ کرنے کا ارادہ کر لیا اور حضرت سلیمان علیہ السلام کو اپنے دورے کی اطلاع دے دی ،، حضرت سلیمان نے ملکہ کا تخت منگوا لیا اور جب وہ دربار مین حاضر ھوئی تو اس کا “‘ تــراہ ” نکالنے کے لئے اک دم اسی کا تخت بیٹھنے کے لئے پیش کر دیا ،، اور سوال کیا ” أھٰکذا عرشکِ؟ کیا آپ کا عرش بھی اسی جیسا ھے ؟ ملکہ نے نہایت وقار سے تخت پر قدم رنجہ فرماتے ھوئے بڑا ڈپلومیٹک جواب دیا ،، جس سے اس کی ذھانت کا اندازہ ھوتا ھے،، اس نے نہ تو تعجب کا اظہار کیا ،، اور نہ ھاں یا نہ میں جواب دیا ،،بلکہ کہا ” کأنہ ھو !! لگتا تو اسی جیسا ھے ! مگر اس نے اس بات کو اپنے حساب میں جوڑ ضرور لیا ! پھر جب سلیمان علیہ السلام نے اپنا دربار اس ھال میں سجایا جہاں نہایت شفاف شیشے کا فرش تھا جس کے پانی میں نیچے چلتی پھرتی مچھلیاں بھی نظر آرھی تھیں اور ملکہ کو دربار میں دعوت دی گئ تو ملکہ نے سمجھا کہ دربار تک جانے والے رستے مین پانی ھے تو اس نے اپنی شلوار تھوڑی سی اوپر اٹھائی ،جس پر حضرت سلیمان علیہ السلام نے آواز دی کہ تشریف لائیے یہ شیشہ ھے پانی اس کے نیچے ھے،، اس بات سےملکہ حقیقت کی تہہ تک پہنچ گئ کہ یہ نفیس آدمی عام دنیا دار بادشاہ نہیں بلکہ واقعتاً کسی عظیم آسمانی ھستی کا نمائندہ ھے،، یوں اس نے سابقہ زندگی سے توبہ کر کے سلیمان علیہ السلام کے دست مبارک پر اسلام قبول کر لیا ! جس کے نتیجے میں اس کے اندازِ حکومت کو دیکھتے ھوئے سبا کی حکومت ملکہ ھی کے پاس رھنے دی گئ ،یوں ملکہ اپنی پوری قوم سمیت مسلمان ھو گئ،،خود بھی دونوں جہانوں میں کامیاب ھوئی اور اپنی قوم کو بھی سرخرو کر دیا ! اس کا تقابل اگر کرنا ھے تو مرد بادشاہ سے کر کے اپنے ضمیر کے مطابق فیصلہ کریں کہ مرد بادشاہ کامیاب ھوا یا عورت ملکہ ؟؟ نیز کس کی قوم برباد ھوئی ،مرد بادشاہ کی یا عورت حکمران کی ؟؟ 1-پہلے نمبر پر فرعون کو دیکھ لیں ایک نہیں دو رسول تشریف لائے تھے،ایک ملاقات نہیں بلکہ 30 سال انہوں نے محنت کی اور 9 معجزے اس نے دیکھے ! مگر خود بھی ڈوبا اور قوم بھی ڈبو دی ! قرآن اس کی بربادی اور کم عقلی کا ذکر کچھ یوں کرتا ھے ” و اضل فرعون قومہ وما ھدی،، فرعون نے اپنی قوم کو گمراہ کیا ،انہیں سیدھی راہ نہ سجھائی ! اور فیصلہ سنایا یقدم قومہ یوم القیامہ فاوردھم علی النار، و بئس ورد المورد ! اور وہ اپنی قوم کے اگے آگے چلے گا قیامت کے دن اور انہیں آگ میں جا اتارے گا اور برا ٹھکانہ ھے اترنے کے لئے ! 2- قیصر کو اللہ کے رسول ﷺ نے خط لکھا اور اسے لکھا کہ اگر تم مسلمان ھو جاؤ گے تو تمہاری قوم بھی مسلمان ھو جائے گی اور تمہیں ان کے اسلام کا اجر بھی ملے گا،،اور تمہاری بادشاھی بھی تمہارے پاس رھے گی ! اور اگر تم پہلے کافر بنے تو تمہاری قوم بھی تمہارے اتباع میں کافر رھے گی ، یوں تمہیں ان کے گناہ کا بوجھ بھی اٹھانا ھو گا ! ابوسفیان کی گواھی کے نتیجے میں حق کچھ اس طرح قیصر پر واضح ھوا تھا کہ اس نے یقین کے ساتھ کہا تھا کہ اس رسول کا حکم ٹھیک اس جگہ پہنچ کر رھے گا جہاں اس وقت میرے یہ قدم ھیں،،مگر وہ اپنی قوم کے سرداروں کے دباؤ کا سامنا نہ کر سکا اور ان کے دباؤ میں اور بادشاھی جانے کے ڈر سے اسلام قبول نہ کر سکا یوں خود بھی برباد ھوا اور اپنی قوم کو بھی برباد کیا، جبکہ ملکہ بلقیس نے حق واضح ھو جانے کے بعد ایک لمحے کی دیر بھی نہیں کی اور اسلام کو قبول کرنے کا بولڈ قدم اٹھایا اور سرداروں کے دباؤ کو مسترد کر کے اپنے عوام کو دونوں جہانوں کی بربادی سے بھی بچا لیا اور اپنی بادشاھی اور حکمرانی بھی بچا لے گئ !
فاعتبروا یا اولی الابصـــار !!

فیس بک

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *