منہ لٹکا کر جینے سے موت لیٹ نہیں ھو جائے گی ،،
ھسنے بسنے اور خوش باش رھنے سے موت پہلے نہیں آ جائے گی ،،،
اس وقت مقرر ھے ،جہاں ھم ھونگے وھیں آ لے گی ،، یہ اس کی ذمہ داری ھے کہ وہ ھم سے آ کر ملے ،، ھم پہ ھوتا تو وہ بیچاری تک انتطار کرتی رھتی ،،
جن کا گمان یہ ھے کہ ھسنے بسنے اور خوش باش رھنے سے اللہ کا غضب بھڑکتا ھے وہ پھر اللہ کو سمجھے ھی نہیں ،،،،،،، انہیں پہ اعتماد ھی نہیں ،،،
انسان جوں جوں اس کی تخلیق کے راز کھوج رھا ھے ، وہ خوش ھو رھا ھے ، جب تک انسان اس فطرت کا آخری راز کھوج نہیں لیتا ،،،،،،،،،،، تب تک قیامت نہیں آئے گی اور نہ ھی رب اس کائنات کی بساط لپیٹے گا،، آخری ھٹتے ھی ،، آخری گرہ کھُلتے ھی ،، آخری گتھی سلجھتے ھی ،، وہ سامنے کھڑا ھو گا ،،،،،،،،،،،،، انسان کو شاباش دینے کے لئے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،، ایک سرے سے سائنسدان لگا ھوا ھے ، دوسرے سرے سے صوفی لگا ھوا ھے ،،،،،،،،، اور درمیان میں اک بندوق والا ھے جو دونوں کو مٹانے کے چکر میں ھے !

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *