کھلونے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،
خدا واقعات کی زبان میں بولتا ھے ،،،،، سورہ یوسف پڑھ لیں ،،،،،،،، ھر جگہ تقدیر رستہ روکنے والوں نے ٹھیک خدا کی منشاء کو ھی پورا کیا ھے اور اللہ کے مقصد کو حاصل کرنے میں اس کی مدد کی ھے ،
باپ نے ھونی کا رستہ روکنے کے لئے تدبیر کی کہ بھائیوں کو خواب مت بتانا ورنہ وہ کوئی چال چل جائیں گے تا کہ اس خواب کی تعبیر حاصل نہ ھو ،،،،،،،،،،،،،،،،
مگر خود یوسف کو مستقبل کا نبی جان کر ان سے ٹوٹ کر پیار کرنا شروع کر دیا اور بھائیوں کے وار کی راہ ھموار کر دی ،، خود بھیڑیئے والا آئیڈیا ان کے کان میں پھونک دیا ” و اخاف ان یأکلہ الذئب و انتم عنہ غافلو ن ،،،،، بھائیوں نے جان چھڑانے کے لئے ٹھیک وھی کنواں چنا جہاں مصر کے قافلے کو آنا تھا ،قافلے والوں نے ٹھیک اس گھر میں بیچا جہاں زلیخا تھی ،زلیخا نے ٹھیک اس وقت جیل پہنچایا جب وھاں بادشاہ کا ساقی آیا ، یوسف علیہ السلام کا ساقی کو اپنے کیس کا حوالہ ،،مگر ساقی کا بھول جانا اور یوسف علیہ السلام کا اللہ کی لکھی گئ مدت پوری کرنا ، عین قحط کے زمانے میں بادشاہ کا خواب ،یوسف کی تعبیر و تدبیر ،،، بھائیوں کا آنا ،،،،،،،،،،،،،،،،،، واقعات کی لائن لگی ھوئی ھے اور ھر بندہ اللہ کے لکھے ھوئے کو ایک کھلونے میں بھری گئ چابی کی طرح پورا کرتا چلا جا رھا ھے واللہ غالب علی امرہ ،، اللہ اپنا مقصد پا کر ھی رھتا ھے ،،،،،،،جس دن سے یہ سمجھا ھے واقعات و حادثات کے پیچھے فاعل حقیقی کھل کر کچھ اس طرح سامنے آیا ھے کہ ،،،،،،،،، اب واقعات کے معاملے میں بے حسی طاری ھو گئ ھے ،،
نہ داد سامنے ، نہ غم آورد نقصانے ،،
باپیشِ ھمتِ ما ھر چہ آمد بود مہمانے !!
سامانِ زندگی ملے تو خوشی نہیں ھوتی ، ضائع ھو جائے تو غم نہیں ھوتا ،،
میرے کے سامنے یہ سب مہمان کی طرح آتے ھیں میں ان کو اچھے طریقے سے انٹرٹین کر کے فارغ کر دیتا ھوں ،،،،،،،،،، بس تجسس یہ ھوتا ھے کہ اب رحمان کیا کرنے جا رھا ھے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *