دمِ اضطراب مجھ کو جو خیالِ یار آئے !
میرے دل میں چین آئے تو اسے قرار آئے !
میرے دل کو دردِ الفت وہ سکون دے الہی !
میری بےقراریوں کو نہ کبھی قرار آئے !
سببِ وفورِ رحمت میری بے زبانیاں ھیں !
نہ فغاں کے ڈھنگ جانوں نہ مجھے پکار آئے !
مجھے کیا الم ھو غم ،مجھے کیا ھو غم الم کا ؟؟
کہ علاجِ غم الم کا میرے غمگسار آئے !
گُلِ خلد لے کے زاھد تجھے خارِ طیبہ دے دوں ؟
میرے پھول مجھ کو دیجئے بڑے ھوشیار آئے !
جو چمن بنائے بَن کو ،جو جناں کرے چمن کو !
میرے باغ میں الہی کبھی وہ بہار آئے !
وہ کریم ھیں یہ سرور ﷺ کہ لکھا ھوا در پر !
جسے لینے ھوں دو عالم وہ امیدوار آئے !
تیری رحمتوں سے کم ھیں میرے جرم ، اس سے زاید!
نہ مجھے حساب آئے ، نہ مجھے شمار آئے !

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *