حضرت ابوذر غفاریؓ والی روایت میں کہ جس میں کہا گیا ھے کہ مومن اگرچہ زانی اور چور ھو جنت ضرور جائے گا چاھے ابوذر کی ناک رگڑی جائے یعنی ان کو ناگوار معلوم ھے ، اس حدیث میں زانی اور چور مومن کے بغیر حساب اور بغیر عذاب جنت میں جانے کی بات تو نہیں کی گئ ، اس حدیث میں یہ ثابت کیا گیا ھے کہ کبیرہ گناہ کے ارتکاب سے بھی مومن کافر نہیں ھو جاتا بلکہ سزا بھگت کر آخرکار جنت ضرور جائے گا کیونکہ وہ ایمان کی وجہ سے جنت کا شھری ھے ،، مومن سزا کے طور پر جھنم جائے گا اور سزا بھگت کر اپنے Native Country کو ڈی پورٹ کر دیا جائے گا ،، جبکہ کافر اپنے کفر کی وجہ سے بطور شھری جھنم میں جائے گا نہ کہ گناہ کی وجہ سے ، لہذا وہ ھممیشہ اپنے Native Country میں ھی رھے گا ،
ع
ن أبى ذر الغفارى رضى الله عنه أنه قال :-
” أتيتُ النبيَّ صلى الله عليه وسلم وعليه ثوبٌ أبيضُ ، وهو نائمٌ ، ثم أتيْتُه وقد استيقَظَ ، فقال : ما مِن عبدٍ قال : لا إلهَ إلا اللهُ ، ثم ماتَ على ذلك إلا دخَلَ الجنةَ . قلتُ : وإن زنى وإن سَرَقَ ؟ قال : وإن زنى وإن سَرَقَ . قلتُ : وإن زنى وإن سَرَقَ ؟ قال: وإن زنى وإن سَرَقَ . قلتُ : وإن زنى وإن سَرَقَ ؟ قال : وإن زنى وإن سَرَقَ على رَغْمِ أنفِ أبي ذرٍّ . وكان أبو ذرٍّ إذا حدَّثَ بهذا قال : وإن رَغِمَ أنفُ أبي ذرٍّ ” .
الراوي: أبو ذر الغفاري المحدث: البخاري – المصدر: صحيح البخاري – الصفحة أو الرقم: 5827
خلاصة حكم المحدث: [صحيح] جبکہ خوارج کے نزدیک مومن کبیرہ گناہ سے کافر اور واجب القتل ھو جاتا ھے ،،

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *