وقت کی عمر کیا بڑی ھو گی !
اک ترے وصل کی گھڑی ھو گی ؟
دستک دے رھی ھے پلکوں پر !
پھر کوئی ساون کی جھڑی ھو گی !
التجا کا ملال کیا کیجئے ،،،،،،،، !
ان کے در پر کہیں پڑی ھو گی !
عدم کے مسافرو ” ھوشیار ” !
راہ میں زندگی کھڑی ھو گی !
موت جس کو کہتے ھیں ساغر !
زندگی کی کوئی کڑی ھو گی !
جنت

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *