Home / Hadith / Mozoat / شرافت میں بھی ھمارا گزارا نہ ھوا

شرافت میں بھی ھمارا گزارا نہ ھوا

مسجد کے سامنے میرے دوست حاجی شریف صاحب کی اسٹیشنری ھے ، Sharif Stationary ,, فیصل آباد سے تعلق ھے اور حسب روایت نہایت نفیس آدمی ھیں ،، مجھے آج تک فیصل آباد کے جو لوگ بھی ملے ھیں نہایت اچھے انسان ملے ھیں ،، اگر رانا ثناء اللہ اور عابد شیر علی نہ ھوتے تو فیصل آباد والوں کی دعا سے بارش برس جایا کرتا
شریف صاحب واقعی شریف ھیں لہجہ انتہائی میٹھا ھے مگر جب بولتے ھیں تو بس دل کرتا ھے کہ وہ بولا کریں اور سنا کرے کوئی ،،،،،،،،،،،
فون کرتے تو فرماتے ،ھیلووووووووووووووووووو میں شریف ھوں ،،،،،،،،،،،
انداز ایسا ھوتا تھا کہ دوسری طرف بیٹھے بندے کے منہ سے بیساختہ نکل جاتا کہ ” سرکار پولس ساڈے پچھے وی نئیں لگی ، ھم بھی شریف ھی ھیں ” پھر یہ تصحیح کرتے کہ میں شریف اسٹیشنری سے محمد شریف بات کر رھا ھوں ،،
ایک خاتون ھیں ،، ھماری عزیزہ ھیں ،، ان کے شوھر کا نام بھی محمد شریف تھا اور وہ جی ٹی ایس کی بس چلاتے تھے ، جس میں سہولت تھی کہ ملازم کے گھر والے فری سفر کر سکتے تھے ، انہوں نے گھر یہ بات بتا رکھی تھی مگر بات اتنی ساری کی تھی کہ تم کنڈیکٹر کو اتنا بتا دینا کہ میں شریف کی بیوی ھوں ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
وہ صدیقی چوک سے راجہ بازار جانے کے لئے سوار ھوئیں ،کنڈیکٹر آیا بی بی جی ٹکٹ ،،،،، انہوں نے کہا ،،
بھائی میں شریف کی بیوی ھوں ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
بہن میریئے ،، ایہہ ساریاں شریفاں دیاں بیویاں نے ، کوئی وی اشتہاری دی بیوی نئیں ،،کرایہ کڈو کرایہ ،،،،،،،، کنڈیکٹر نے جواب دیا ،،،،،،،،،،،،،،،،

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *