Home / Humanity / جوانی کی ٹہنیاں اور آندھی

جوانی کی ٹہنیاں اور آندھی

چھ فٹ بشیرا اکڑ کے چلتا تھا ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
لاچے کے دونوں ” لڑ ” ٹخنوں تک لٹکا کے رکھتا تھا ،،،،،،،،،،،،،،،
لاچہ ( تہبند ) گھسیٹ کر چلتا تھا ،،،،،،،،،،،،،،،
اس کے کھُسے کے سامنے بچھو کے ڈنگ کی طرح اٹھے ھوئے ڈنگ تھے ،،
اور ویسی ھی اس کی مونچھیں تھیں ،،،،،،،،،،
مولوی صاحب نے اسے کئی بار سمجھایا کہ ،دیکھ بشیرےیہ تکبر ھے جو کہ اللہ کو پسند نہیں ،،،،،،
وہ کہتا مولوی جی یہ تکبر نہیں جوانی کی ٹہنیاں ھیں جو سر سے پاوں تک ادھر اُدھر پھیلی ھوئی ھیں ،،،،،،،،، اور مسکرا کر چل دیتا –
پھر اس کی ھو گئ اور مولوی صاحب اس گاؤں سے کہیں اور چلے گئے ،،،،،،،،،
کافی عرصے بعد ایک دن سرِ بازار مولوی صاحب کا اس سے آمنا سامنا ھو گیا ،،
مولوی صاحب پہچان بھی نہ پاتے اگر وہ خود ان کو آواز نہ دیتا ،،، اوئے بشیرے ،، یہ تم ھو ؟ مولوی صاحب کا ” تراہ ” نکل گیا بشیرے کے دائیں بائیں دو بچے ھاتھ پکڑے ھوئے تھے ،تیسرا اس کے کندھوں پہ بیٹھا تھا ، بشیرے کا لاچہ نہیں اب ایک دھوتی تھی جو گھٹنوں سے بس تھوڑی سی نیچے تھی ،، مونچھیں خشخاشی ھو چکی تھیں اور پاؤں میں فرعونی کھُسے کی بجائے قینچی چپل تھی ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
بشیرے تمہیں کیا ھو گیا ھے ؟ مولوی صاحب نے تأسف سے پوچھا،،
وہ تیری جوانی کی ٹہنیاں کیا ھوئیں ؟
بشیرے نے ایک دم پلٹ کر پیچھے دیکھا ،،، تھوڑی دور پیچھے اس کی بیوی دو بچے لئے کھڑی تھی اور بے چینی سے دونوں کی گفتگو ختم ھونے کا انتظار کر رھی تھی ،،،
مولوی جی ،، آندھی ،،،، ،،بشیرے نے آئستہ سے کہا ،، مولوی صاحب نے جھٹ آسمان کی طرف دیکھا ،، کہاں ھے آندھی بشیرے ؟ تیرا دماغ تو ٹھیک ھے ؟ آئستہ بات کریں مولوی صاحب ،بشیرے نے آواز دبا کر کہا ،،،،،،،
آندھی آئی تھی مولوی صاحب ،، جس نے جوانی کی وہ ٹہنیاں توڑ کر ھاتھ میں پکڑا دی ھیں ،،بشیرے نے ھاتھ تھامے بچوں کی طرف آنکھ سے اشارہ کر کے کہا ،، اور جھٹ سے سلام کر کے چل پڑا

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *