Home / Humanity / بنتے مِٹتے آیڈیئلز

بنتے مِٹتے آیڈیئلز

اللہ شکر ھے کہ تمناؤں پہ نہ کوئی پابندی ھے اور نہ کوئی ٹیکس ،، لہذا تمناؤں کی مارکیٹ میں سے سب سے بڑا تھیلا بھر کر غریب ھی نکلتا ھے ، اس کی تمنا روز تبدیل ھوتی ھے ، اور تبادلے پہ بھی کوئی پابندی نہیں ھے ،،مینڈک کا بچہ کچھ دن بالکل مچھلی کے بچے سے مشابہ ھوتا ھے ، صرف ایک سر اور پیچھے لمبوترا سا بدن ،، اس بدن کو لہرا کر مچھلی کی طرح ھی تیرتا ھے اور ھم بہت سارے اکٹھے کر کے مچھلی سمجھ کر ھی کھاتے رھے تھے کیونکہ ایک Myth تھی کہ اگر آپ زندہ مچھلی نگل لیں تو آپ کو تیراکی آ جاتی ھے ،، جہاں پانی بھی کنوئیں سے بھر کر لایا جاتا تھا ،اور کنوئیں میں مچھلی نہ دیکھی نہ سنی ،گھڑے کی مچھلی تو البتہ سنی ھے ،، وھاں تالاب میں ھی مچھلی دستیاب تھی چنانچہ ھم نے اسے زندہ نگل کر تیراکی سیکھی ،تا آ نکہ ماسٹر سجاد صاحب نے نویں کلاس میں سائنس میں مینڈک کے بارے میں پڑھایا اور ساتھ اس کے بچوں کی تصویریں دکھائیں تو اچانک وہ کتاب سے اڑ کر ھمارے پیٹ میں جلولی عرف کھجلی کرنے لگ گئے ،ھم کلاس چھوڑ کر باھر بھاگے اور برآمدے میں جا کر الٹی کر دی ،،ماسٹر صاحب نے پوچھا کہ کیا ھوا ھے ،جواب دیا سر منہ میں مینڈک کے بچے آ گئے تھے ،انہوں نے سر سے پاؤں تک ھم کو گھورا کہ ھم مذاق کر رھے ھیں یا پاگلِین ھو گئے ھیں ،، ھم پہلے پہل عربی میں پاگل کو پاگلین ھی کہتے تھے ،،،،،،،، خیر مینڈک کے اس مچھلی نما بچے نے ماں کو اچانک بتایا کہ وہ مینڈک بننے کا کوئی ارادہ نہیں رکھتا بلکہ اب کچھ چینجنگ چاھتا ھے ،، اس کی ماں کا تراہ نکل گیا ،، کیوں پتر مینڈک کیوں نہیں بننا ،بس امی میرا دل کچھ اور بننے کو چاھتا ھے ،کتنا فخر محسوس کریں گی آپ جب سب لوگ کہا کریں گے کہ یہ خرگوش اس مینڈک کا بچہ ھے ،، بس میں نے خرگوش بننا ھے ،، بیٹا تو نے مینڈک ھی بننا ھے ،، نہ اماں بہت ھو گیا میرے پاس بہت سارے آپشنز ھیں اس سے پہلے کہ میرے آپشن ایک ایک کر کے ختم ھو جائیں میں کچھ نہ کچھ بن کر دکھاؤں گا ،، دوسرے دن اس نے ایک ھرن کو پانی پیتے دیکھا تو سیدھا جا کر ماں کو ٹھکورا ،، امی میں نے سوچا ھے کہ مینڈک تو ھماری ھی طرح اچھلتا ھے ،، میں بس ھرن بنوں گا ،کتنا مزہ آئے گا جب اپنی ماں کو اپنے اوپر بٹھا کر گھمانے لے جایا کرونگا ،،، ماں نے سمجھایا کہ بیٹا تو ٹینشن نہ لیا کر تو مینڈک ھی بنے گا ،،، دو چار دن بعد اس نے اعلان کیا کہ اماں میں نے ھاتھی بننا ھے ،، سبحان اللہ پانچ ٹانگیں ھیں اس کی اور ایک ٹانگ سے پانی بھی پیتا ھے ،، دو چار مزید آئیڈیلز بدلنے کے بعد ایک دن اس نے دیکھا کہ اس کے چار ٹانگین نکل آئی ھیں اور اس کے آپشنز ختم ھو گئے ھیں وہ نہ چاھتے ھوئے بھی مینڈک بن چکا ھے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،
کسی کو کچھ بھی یہاں حسبِ آرزو نہ ملا !
کسی کو ھم نہ ملے اور ھم کو تُو نہ ملا !
خیر ھم بھی سوچا کرتے تھے کہ ھم نے ڈرائیور بننا ھے، کیا ٹؤر ھوا کرتی تھی اس زمانے میں استادوں کی ، ساری بس کی نظریں استاد کی Movement پہ لگی ھوتی تھیں ،وہ سگریٹ جھاڑنے اٹھے تو بھی سواریوں کے چہرے کھِل اٹھتے تھے کہ شاید استاد کو ان پہ رحم آ گیا ھے اور بس چلنے لگی ھے ،، ھمیں اس دن استاد کالے خان بہت آیا جس دن ھم نے ادارہ منہاج القرآن کی مسجد میں قادری صاحب کے پیچھے جمعہ پڑھا ،، ابھی نعت چل رھی تھی کہ اچانک قادری صاحب اٹھے ،،،،،،،،،،،،، میرے سمیت پوری مسجد کا طراہ نکل گیا کہ ان کو کیا ھو گیا ھے ،کیا دیکھ لیا ھے انہوں نے ؟؟ ،بعض خوش گمان تو سوچ رھے تھے شاید کسی کے استقبال کو جا رھے ھیں ،، پوری مسجد کے سینے تو قبلہ رخ تھے مگر چہرے سورج مکھی کے پھول کی طرح قادری صاحب کے ساتھ ساتھ پھرتے جا رھے تھے – کچھ لوگ کھڑے بھی ھو گئے کہ ، شالا خیر دی خبر کوئی آوے جی گھبراوے ،،،،،،،،،،، جی او ڈھولا ،،،،،، قادری صاحب بتا بھی کچھ نہیں رھے تھے بڑی سنجیدگی سے بس چلتے جا رھے تھے ،،،،،،،،،،،
قادری صاحب باھر پہنچے اور وضو والی جگہ پہنچ کر زور سے آخ تھُو کر کے واپس آ گئے ،، سارے ایک دوسرے سے شرمندہ تھے ،اور نظر نہیں ملا رھے تھے اور نہ ھی قادری صاحب نے کوئی معذرت کی ،،،،،،،،،،، استادوں کی یہی ادا دیکھ کر ھم نے بھی استاد بننے کا سوچا تھا ،، میرپور سے کھوئیرٹہ سانپ کی طرح بل کھاتی سڑکیں اور ان میں دل کو چیر کر رکھ دینے والی گھونجتی آواز ۔۔ یہ وادیاں ،یہ پربتوں کی شہزادیاں ،،،،،، پوچھتی ھیں مجھ سے کب بنے گی تُو دلہن،، میں کہوں جب آئیں گے میرے صنم ،میرے صنم ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،، اللہ پاک کو ھمارے نیک ارادوں کا علم تھا لہذا ھمارا بندوبست کیا جانے لگا ،،،،،،،، اور کر دیا گیا ،،، بہت جلد ھم نے استاد کالے خان کی بجائے عدالت حسین کو اپنا آئیڈیل بنا لیا ،، عدالت حسین سانولے رنگ اور کتابی چہرے کا مالک تھا ،تین انگل چوڑے منہ پر جہاز کے پروں کی طرح نکلی ھوئی مونچھیں پیچھے سے بھی نظر آتی تھیں ،،،،،،،،، مگر ھمیں اس کی اتھارٹی بہت پسند تھی ،جب چاھے جس کلاس میں چاھے مونچھوں سمیت گھُس آئے کوئی پوچھنے والا نہیں ،، ھمارے لئے تو وہ پیام رحمت ھی ثابت ھوتا تھا ، ادھر ماسٹر صاحب لڑکوں کو مارنے کے لئے ڈنڈا ھاتھ میں لئے چبوترے سے اترتے اور ادھر رجسٹر ھاتھ میں لئے عدالت حسین دروازے سے نمودار ھوتا ،، مے آئی کم ان ،، اس نے کبھی نہیں کہا تھا ،جب تک وہ رجسٹر پہ دستخط لیتا ماسٹر صاحب کا غصہ بھی ختم ھو چکا ھوتا ،، عدالت حسین بھی ماسٹروں کا بھگایا ھوا تھا لہذا اس کا ووٹ ھمیشہ ھمارے حق میں ھوتا تھا ،ماسٹر صاحب ھمیں مرغا بنا کر عدالت حسین کو کھڑا کر جاتے اور خود واش روم چلے جاتے یا ھیڈ ماسٹر صاحب کے دفتر چلے جاتے – عدالت حسین ھمیں کان چھڑوا کر کرسیوں پہ بٹھا دیتا اور خود دروازے پہ کھڑا ھو کر نگرانی کرتا ،جونہی ماسٹر صاحب نظر آتے وہ کاشن دیتا اور ھم پھر انسان سے مُرغا بن جاتے ،،،،،،، ایک دن ماسٹر صاحب کو شک پڑ گیا ، کہنے لگے یار مجھے تو لگتا ھے تُو لڑکوں کی بجائے میری نگرانی کرتا ھے ،،،،،،، ھمارا اگلا آئیڈیل حاجی ابوذر تھا جو ڈھونگ والے میلے میں سردئی کی ریڑھی لگاتا تھا ،،،،،،،،،،،،،،،
جاری ھے

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *