ایک معززخاتون کی اسماعیل نامی شخص سے ہوئی۔اسماعیل ایک متقی شخص اور جلیل القدر عالم تھے۔انہوں نے رحمتہ اﷲ علیہ کی شاگردی اختیار کی۔اس مبارک شادی پھل میاں بیوی کوایک نامی گرامی بچےکی صورت میں ملاجس کانام انہوں نے”محمد”رکھا۔شا دی ہوئے ابھی کچھ ہی گزرےتھے کہ اسماعیل بیوی اور چھوٹے بچےکوداغ مفارقت دےگئےاور وراثت میں کافی دولت چھوڑگئے۔
والدہ انتہائی انہماک کے ساتھ اپنے بیٹے کی تربیت میں جت گئیں۔ان کی خواہش تھی کہ ان کا بیٹا ایک جلیل القدر عالم بن کر افق عالم پر چمکے اوراپنے علم سے تاریک دنیا کو منور کردے لیکن ان کی حسرت و یاس کا اس وقت کوئی ٹھکانا نہ رہا جب ان کے بچے کے مستقبل میں ترقی اور انکی تمناؤں کی تکمیل میں ایک بڑی رکاوٹ پیدا ہوگئی۔بچپن ہی میں یہ بچہ اپنی بینائی سے ہاتھ دھوبیٹھا اب نابینا ہونے کی صورت میں یہ بچہ حصول تعلیم کے لیے علماء کے دروس میں شرکت سے معذور تھا اور نہ وہ حصول علم کےلیے دوسرے شہروں کاسفراختیارکرسکتاتھا۔ کا یہ غم کھائےجارہاتھاکہ آخراس بچےکا کیا ہوگا۔عالم دین کیوں کر بن سکےگا۔بینائی کےبغیرعلم کاحصول کیسےممکن ہے؟۔
اس خواہش کی تکمیل کے لیےایک ہی ذریعہ باقی تھا۔ایک ہی راستہ تھااور وہ راستہ دعاکاتھا،چنانچہ اﷲتعالی نے اس پر دعاکےدروازےکھول دئیےاور پورے اخلاص اور سچی نیت کے ساتھ دربارالہی میں گڑگڑا کر رونےلگی اور ﷲ رب العزت کے سامنے دست سوال دراز کرکےبچے کی بینائی کےلیے مانگنےلگی،،،،،یہ دعائیں نجانے کتنی مدت تک ہوتی رہیں کہ ایک رات اس نے عجیب وغریب خواب دیکھا،حضرت ابرہیم خلیل اﷲ خواب میں نظر آئے،وہ کہہ رہےتھے،
“اے بی بی!تیری دعاؤں کی کثرت کے سبب اﷲ رب العالمین نے تیرے بیٹے کی بینائی واپس کردی ہے”
جب محمد کی والدہ بیدار ہوئیں تو دیکھاواقعی اس کے بیٹے کی بینائی بحال ہوگئی ہے،ان کی زبان سے بے ساختہ یہ الفاظ نکلے،
ام من یجیب المضطر اذا دعاہ ویکشف السوء ویجعلکم خلفاء الارض ءالہ مع اﷲ
اے پروردگار!!پریشان حال کی دعائیں تیرے علاوہ کون سن سکتاہےاور کون ہے جو بندوں کی تکلیفوں کو دورکرتاہے۔
یہ عظیم خاتون جو مسلسل دعائیں مانگتی رہیں؛امام المحد ثین محمد بن اسماعیل بخاری رحمتہ اﷲعلیہ کی والدہ محترمہ تھیں جنہوں نے بیٹے کی بینائی لوٹ آنےکےبعد اسکی تعلیم وتربیت اس قدر محنت سے کی کہ اﷲ تعالی نے ان کے بیٹے پرعلوم وفنون کے دروازے کھول دئیے اور پھر آگے چل کر یہ بچہ ایک بہت بڑا محدث بنا اور کتاب ﷲ کے بعد دنیا کی صحیح ترین کتاب مرتب کی جو”صحیح البخاری”کےنام سے مشہور ہےاور بچے کولوگ امام بخاری کے نام سےجانتے ہیں جن کا پورا نام محمدبن اسماعیل البخاری رحمتہ اﷲعلیہ ہے۔

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *