Home / Islam /

میں نے آپ سے مشورے کے ساتھ دوستوں سے گزارش کی تھی کہ وہ ملحد پیجز پر جا کر اپنے شکوک و شبہات علاج نہ ڈھونڈیں ،، بلکہ یہاں میری وال پر ان کو ڈسکس کر لیا کریں گے ،، ملحد پیجز کا حال گنے کے جُوس کی اس ریڑھی کی طرح ھے جس پہ لوگ نارمل یرقان ھیپاٹائٹس اے کے علاج کے لئے گنے کا جوس پینے جاتے ھیں اور ھیپاٹائٹس بی اور سی لے کر آتے ھیں ،،
یہ ساری ڈسکشن اسی سلسلے کی ھے ،،،،،، ساتھیوں کو دل چھوٹا کرنے کی ضرورت نہیں ،، اسپتال بنایا ھے تو ،،،،،،، آپریشنز تو ھونگے ،، اور پیپ تو گرے گی ،گندی پٹیاں بھی نظر آئیں گی ،،،،،،،ویری سوری مگر مجبوری ھے ،انسان کی جان سے انسان کا زیادہ اھم ھے ،،،،،،،،،،،،، بندے نے کہا اے اللہ کے رسول ﷺ ایمان اس شرط پر لاؤں گا کہ شراب پینے سے نہ روکا جائے ،،،،،،،،، آپ ﷺ نے بیعت کے لئے ھاتھ آگے بڑھا دیا ،،،،،،،، بندہ بیعت لے کر چلا گیا ،،،،،،، فرمایا جب ایمان لے آیا ھے تو اب ھم کیوں روکیں گے ،،،،،،،، اب اس کا ایمان اسے روکے گا ،،،،،،، اور ایمان نے اس بندے کو شراب سے روک دیا ،، لا یشربُ الشاربُ حینَ یشرَبُ و ھو مومن ،،، ایمان اندر ھو تو شراب اندر نہیں جاتی ،،،،،، علامہ بدر عالم میرٹھی ترجمان السنہ میں اس کو عنوان دیتے ھیں ،، شرطِ فاسد کے ساتھ بھی ایمان قبول ھے !

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *