چپکے چپکے رات دن ،،، آنسو بہانا یاد ھے !
ھم کو اب تک ،عاشقی کا وہ زمانہ یاد ھے !
””””””””””””””””””””””””””””””””””””””””””””””
ھم کو اُن کا دل کے ویرانے میں آنا یاد ھے !
یاد ھے پھولوں کا ھر سُو مسکرانا یاد ھے !
چند لمحے ، اک نگاہِ ناز ،پھر خواب و خیال !
یاد ھے اس شوخ سے دل کا لگانا یاد ھے !
رحمتِ حق سے فقیروں پر ھے دُونا التفات !
ھاں،،،،،، مگر دنیا میں ان کا آزمانا یاد ھے !
عہدِ پیری میں وھی بچپن کی خُو آنے لگی !
اک ذرا سی بات پر ،،،،، آنسو بہانا یاد ھے !
خود فراموشی میں اپنی ھوشیاری دیکھئے !
مے کدے میں شیخ کا نظریں چرانا یاد ھے !
لذتِ تعمیر بھی ھے وجہِ تعمیرِ حیات !
ریت سے دریا کنارے گھر بنانا یاد ھے !
کیا سنائیں آپ کو اس عاشقی کی داستاں !
ان کا آنا یاد ھے اور ان کا جانا یاد ھے !
کلام -جاوید احمد غامدی مدظلہ العالی ،، خیال و خامہ

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *