نہ سکت ھے ضبطِ غم کی ، نہ مجالِ اشکباری !
یہ عجیب کیفیت ھے،،،، نہ سکوں نہ بے قراری !
یہ قدم قدم بلائیں ،،،،،،،،، یہ سوادِ کوئے جاناں !
وہ یہیں سے لوٹ جائے،جسے زندگی ھو پیاری !
میری آنکھ منتظر ھے۔،،،،،، کسی اور صبحِِ نو کی !
یہ تمہیں مبارک ، جو ھے ظلمتوں کی ماری !
وھی پھول چاک دامن ، وھی رنگِ اھلِ گلشن !
ابھی صرف یہ ھوا ھے ،،،کہ بدل گئے شکاری !
تیرے جاں فراز وعدے، مجھے کب فریب دیتے ؟
تیرے کام آ گئ ھے ،،،،،،، میری زود اعتباری !
تیرا ایک ھی کرم ھے، تیرے ھر ستم پہ بھاری !
غمِ دوجہاں سے تُو نے مجھے بخشی رُستگاری !
جو غنی ھو ما سِوا سے ، وہ “گدا ” گدا نہیں ھے !
جو اسیرِ ما سِوا ھے ، وہ غنی بھی ھے بھکاری !

Visit to Read Books and Articles of Dr. Muhammad Hamidullah

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *